پوچھ اس سے کہ مقبول ہے فطرت کی گواہی| علامہ اقبال |

پوچھ اس سے کہ مقبول ہے فطرت کی گواہی| علامہ اقبال |
پوچھ اس سے کہ مقبول ہے فطرت کی گواہی| علامہ اقبال |

  

پوچھ اس سے کہ مقبول ہے فطرت کی گواہی

تو صاحبِ منزل ہے کہ بھٹکا ہوا راہی

کافر ہے مسلماں تو نہ شاہی نہ فقیری

مومن ہے تو کرتا ہے فقیری میں بھی شاہی

کافر ہے تو شمشیر پہ کرتا ہے بھروسا

مومن ہے تو بے تیغ بھی لڑتا ہے سپاہی

کافر ہے تو ہے تابعِ تقدیر مسلماں

مومن ہے تو وہ آپ ہے تقدیرِ الہی

میں نے تو کیا پردۂ اسرار کو بھی چاک

دیرینہ ہے تیرا مرضِ کور نگاہی

شاعر: علامہ اقبال

(مجموعۂ کلام:بالِ جبریل )

Poochh    Uss    Say    Keh    Maqbool   Hay    Fitrat   Ki   Gawaahi

Tu    Saahib-e-Manzill    Hay    Keh    Bhattka   Hua   Raahi

Kaafir    Hay    Musalmaan   To    Na   Shaahi   Na   Faqeeri

Momin    Hay   To    Be   Taigh    Larrta    Hay   Sipaahi

Kafir   Hay    To    Hay   Taab-e-Taqdeer -e-Musalmaan

Momin    Hay   To    Wo   Aap    Hay   Tqadee-e-Elaahi

Main    Nay   To   Kiya    Parda-e-Asraar    Ko   Chaak

Daireena    Hay    Tera   Maraz-e-Kor    Nigaahi

Poet: Allama   Iqbal

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -