اگر میں کرنے لگوں کھل کے گفتگو مرے دوست| عمران عامی |

اگر میں کرنے لگوں کھل کے گفتگو مرے دوست| عمران عامی |
اگر میں کرنے لگوں کھل کے گفتگو مرے دوست| عمران عامی |

  

اگر میں کرنے لگوں کھل کے گفتگو مرے دوست

تو زرد پڑنے لگیں سبز  و سرخ رُو مرے دوست

حواس باختہ پھرتے ہیں اِس لیے دونوں

کہ مجھ میں مَیں نہ رہا اور تجھ میں تو مرے دوست

سُنا ہے رات در ِ شاہ سے نکالے گئے

بچا کے آئے ہیں مشکل سے آبرو ! مرے دوست

اُنہیں کہو کہ مجھے ایک آنکھ دیکھ تو لیں

جو چاہتے ہیں کوئی تجھ سا ہوبہو مرے دوست

ترے فقیر کے پیروں کی دُھول ہے  عامی

ترے لیے ہے جو دُنیائے رنگ و بُو مرے دوست

شاعر:عمران عامی

(عمران عامی کی وال سے)

Main   Agar   Karnay   Lagun   Khull   K   Guftagu   Miray   Dost

To   Zard   Parrnay   Lagen    Sabz-o-Surkh   Ru   Miray   Dost

Hawaas    Baakhta    Phirtay    Hen   Iss    Liay   Dono

Keh    Mujh    Men    Main   Na    Raha   Aor    Tujh    Men   Tu   Miray   Dost

 Suna   Hay    Raat    Dar-e-Shaah   Say   Nikaalay   Gaey

Bachaa   K   Laaey    Hen    Mushkill    Say    Aabru   Miray   Dost

 Unhen    Kaho    Keh   Mujhay    Aik    Aankh   Dekh   To   Len

Jo     Chaahtay    Hen    Koi   Tujh    Sa    Hu    Ba    Hu   Miray   Dost

 Tiray     Faqeer    K    Pairon    Ki    Dhool    Hay   AAMI

Tiray    Liay   Hay    Jo    Dunya -e-Rang-o-Bu   Miray   Dost

 Poet: Imran    Aami

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -