وہ حسنِ دل رُبا مرے سینے میں آئے گا| عمران عامی |

وہ حسنِ دل رُبا مرے سینے میں آئے گا| عمران عامی |
وہ حسنِ دل رُبا مرے سینے میں آئے گا| عمران عامی |

  

وہ حسنِ دل رُبا مرے سینے میں آئے گا

کافر نہیں ہوا   تو  مدینے میں آئے گا

جس آب و تاب میں ہے وہیں چھوڑ دیجیے

دریا پلٹ کے آپ سفینے میں آئے گا

آنکھیں نہیں حضور ! مرا دل خریدیے

جو اصل مال ہے وہ دفینے میں آئے گا

شاعر کے ساتھ ساتھ وہ مزدور بھی تو ہے

مٹی کا ذائقہ تو پسینے میں آئے گا

نفرت ہے اُس کو یار ! ستمبر کی دھوپ سے

اِس بار فروری کے مہینے میں آئے گا

شاعر:  عمران عامی

(عمران عامی کی وال سے)

Wo    Husn -e-Dil    Ruba    Miray   Seenay    Men   Aaey   Ga

Kaafir   Nahen    Hua   To   Madeenay    Men   Aaey   Ga

 Jiss   Aab-o-Taab    Men    Hay   Wahen    Chorr    Dijiay

Darya    Palatt   K    Aap   Safeenay    Men   Aaey   Ga

 Aankhen    Nahen    Huzoor    Mira    Dil   Kharidiay

Jo    Asl    Maal   Hay   Wo   Dafeenay    Men   Aaey   Ga

 Shaair   K   Saath    Saath   Wo   Mazdoor   Bhi   To   Hay

Matti    Ka    Zaaiqa   To   Paseenay    Men   Aaey   Ga

 Nafrat    Hay    Uss    Ko   Yaar   Sitambar    Ki    Dhoop   Say

Iss    Bar    Farvari   K   Maheenay    Men   Aaey   Ga

Poet: Imran    Aami

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -