اور اب کیا چاہیے ہم سے بتا  تاوان میں| عمران عامی |

اور اب کیا چاہیے ہم سے بتا  تاوان میں| عمران عامی |
اور اب کیا چاہیے ہم سے بتا  تاوان میں| عمران عامی |

  

اور اب کیا چاہیے ہم سے بتا  تاوان میں

روح تک تو ڈال دی ہے تجھ  بتِ بے جان میں

آدھا کفنایا ہوا ہوں  آدھا دفنایا ہوا

دن گزارا دوستوں میں رات قبرستان میں

آپ کے اندر کی کالک کھا گئی ہے آپ کو

لوگ سونا ہو گئے ہیں کوئلے کی کان میں

روشنی کا فیصلہ کرنے چلے ہیں  دیکھیے 

شہر کے اندھے کباڑی بیٹھ کر اَیوان میں

کیا خبر  کس وقت دونوں زندگی کرنے لگے

وہ ہمارے ذہن میں دھڑکیں ہم اُن کے دھیان میں

ہر گزرتے شخص پر آواز کَسنے لگ پڑوں

کیا سجا کر بیٹھ جاؤں  آئنے دوکان میں

جاتے جاتے اِک دُعا کرتے چلیں  میرے لیے

فائدوں پر دل گرفتہ , خوش رہوں نقصان میں

شاعر: عمران عامی

(عمران عامی کی وال سے)

Aor    Ab    Kaya    Chaahiay   Ham   Say   Bataa   Tawaan    Men

Rooh   Tak   To    Daal   Di   Hay    Tujh    But-e-Be    Jaan    Men

 Aadha    Kagfnaaya   Hua    Hun    Aadha    Dafnaaya   Hua

Din    Guzaara    Doston    Men    Raat    Qabristaan    Men

 Aap    K    Andar    Ki    Kaalak    Kha    Gai    Hay   Aap   Ko

Log    Sona    Ho    Gaey    Hen    Koilay    Ki   Kaan    Men

 Roshni    Ka    Faisla    Karnay    Chalay    Hen   Dekhiay

Shehr   K    Andhay    Kabaarriay    Baith    Kar    Aiwaan   Men

 Kaya    Khabar     Kiss   Waqt    Dono    Zindagi    Karnay   Lagen

Wo    Hamaaray    Zehn   Men     Dharrken    Ham    Un    Ki    Jaan    Men

 Har    Guzartay    Shakhs    Par    Awaaz    Kasnay    Lagg   Parrun

Kaya    Sajaa    Kar   Baith    Jaaun     Aainay    Dukaan    Men

 Jaatay    Jaatay    Ik    Dua   Kartay     Chalen    Meray   Liay

Faaidon    Par    Dil    Garifta    ,   Khush    Rahun    Nuqsaan    Men

Poet: Imran Aami

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -