پاکستان اوربرطانیہ کے مابین تجارتی حجم میں 20فیصد اضافہ ہوا

پاکستان اوربرطانیہ کے مابین تجارتی حجم میں 20فیصد اضافہ ہوا

کراچی (اکنامک رپورٹر)کراچی میں تعینا ت برطانیہ کے ڈپٹی ہائی کمشنر اور ڈائر یکٹر ٹریڈ وسرمایہ کاری جون اے ٹک نوٹ نے کہاہے کہ پاکستان اوربرطانیہ کے مابین تجارتی حجم میں 20فیصد اضافہ ہوا ہے اوردوطرفہ تجارت کو مزید فروغ دینے کے لیے کراچی، حیدرآباد،سیالکوٹ،پشاور اور کوئٹہ میں بزنس سینٹرزکاقیام عمل میں لایا جائیگا جس کے مثبت نتائج برآمد ہونگے یہ بات انہوں نے گزشتہ شب عفیف گروپ کے چیئرمین راشد احمد صدیقی کی جانب سے دئیے گئے عشائیے کے موقع پرکہی اس موقع پر ٹریڈڈیولپمنٹ اتھارٹی کے چیف ایگزیکٹو ایس ایم منیر،کراچی انڈسٹریل الائنس کے صدر میاں زاہد حسین ، کاٹی کے صدر سید فرخ مظہر،راشد صدیقی نے بھی خطاب کیا جبکہ سینیٹرعبدالحسیب خان، خالدتواب،زبیرطفیل،ممتازشیخ،ملک خدابخش،عبدالسمیع خان، منیر سلطان اوردیگر بھی موجودتھے۔جون اے ٹک نوٹ نے کہا کہ برطانیہ حکومت کی خواہش ہے کہ پاکستانی عوام خوشحالی اور ترقی کی جانب گامز ن ہوسکے اسی لیے پاکستان میں برطانیہ کی متعددکمپنیاں جن میں اسٹینڈرڈچارٹرڈ،یونی لیور،شیل اوردیگر اپنی خدمات انجام دے رہے ہیں،

انہوں نے کہا کہ برطا نیہ اورپاکستان کے مابین خوشگوارتعلقات قائم ہیں اور دونوں ممالک کے مابین تجارت کے وسیع مواقع موجودہیں جسکا بھرپورفائدہ بزنس سینٹر ز کے قیام سے حاصل ہوگا ۔اس موقع پر ٹریڈڈیولپمنٹ اتھارٹی کے چیف ایگزیکٹوایس ایم منیرنے کہا کہ TDAP ملکی برآمدات کے فروغ کے لیے سرگرم ہے اور برطانیہ میں پاکستانی مصنوعات کی زیادہ سے زیادہ برآمدات کے لیے اپنے ہرممکن اقدامات کررہا ہے جسکے مثبت نتائج برآمد ہورہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان میں معاشی سرگرمیوں کو فروغ دینے کے لیے تمام سیاسی جماعتوں کو اپنا کرداراداکرنے کی ضرورت ہے ،چند ہزار افراد کے دھرنوں کے باعث پوراملک یرغمال بن چکا ہے اور برآمدات بری طرح متاثرہورہی ہیں۔انہوں نے کہا کہ وزیراعظم نوازشریف ملکی معاشی ترقی کے لیے کوشاں ہیں جسکے لیے اقدامات بھی کیے جارہے ہیں لیکن ملک میں جاری دھرنے اور جلوس معاشی تباہی کاباعث بنتے جارہے ہیں۔ایس ایم منیر کے کہا کہ اسلام آباد میں گزشتہ 20 روز سے جاری کشیدہ صورتحال نے بین الاقوامی سرمایہ کاروں اورخریداروں کے تحفظات میں اضافہ کردیاہے جس سے ملکی برآمد ی آڈرز کی تکمیل اورنئے آڈرز بری طرح متاثر ہو نے کا اندیشہ ہے لہذاملک میں غیریقینی کی صورتحال کاخاتمہ کرنے کے لئے تحریک انصاف اوردیگر فوری طورپر اپنے دھرنوں کو ختم کرتے ہوئے مثبت اقدام کی جانب پیش قدمی کرے ۔کراچی انڈسٹریل الائنس کے صدرمیاں زاہد حسین نے کہا کہ پاکستان کو جی ایس پی پلس کادرجہ ملنے کے بعد پاکستانی مصنوعات کی یورپ اور برطانیہ میں برآمدات کومزید فروغ حاصل ہوگا۔انہوں نے کہا کہ برطانیہ اورپاکستان اپنے تجارتی تعلقات کو مضبوط اور مستحکم کرنے کے لیے دوطرفہ تجارتی وفودکاتبادلہ اور نمائشوں کاانعقاد کرے تاکہ دوطرفہ تجارت کومزید بڑھایا جاسکے ۔انہوں نے کہا کہ وزیراعظم نوازشریف کو موجودہ صورتحال میں چائینز صدر کے اپنے دورہ منسوخ کیے جانے اورتجارتی وکاروباری سرگرمیاں متاثرہونے سے شدید مالی خسارے پر فوری طور پر ملک کے اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ اپنا اجلاس طلب کرنا چاہیے ۔کاٹی کے صدر سیدفرخ مظہر نے کہا کہ برطانیہ اور پاکستان کے مابین تجارت کوبڑھانے کامشن کامیابی سے ہمکنارہوگاجسکے لیے پاکستانی تاجروصنعتکاربرادری بھرپور کردار ادا کریگی۔انہوں نے کہا کہ اسلام آبادکے موجودہ حالات کے باعث مقامی اورغیر ملکی سرمایہ کاروں میں پائی جانے والی بے چینی کا جلد خاتمہ ہوجائیگااور ملک خوشحالی کی جانب گامزن ہوگا۔

مزید : کامرس