وزیراعلیٰ کا آرمی چیف سے متعلق بیان سول سوسائٹی کیساتھ نا انصافی ہے،وٹو

وزیراعلیٰ کا آرمی چیف سے متعلق بیان سول سوسائٹی کیساتھ نا انصافی ہے،وٹو

لاہور( نمائندہ خصوصی ) پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر میاں منظور احمد وٹو نے پنجاب کے وزیراعلیٰ کے آرمی چیف جنرل راحیل شریف کے متعلق بیان کو موجودہ ملکی سیاسی صورتحال کے پیش نظر غیر ضروری قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ میں سمجھتا ہوں کہ ان کے اس بیان کی وجہ سے بلاوجہ ایک نئی بحث چھڑ سکتی ہے۔ میڈیا سیل سے جاری ہونے والے اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ پنجاب کے وزیر اعلیٰ نے مسلم لیگ کارکنوں سے کل خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’’ جنرل راحیل شریف کے ہوتے ہوئے کوئی جمہوریت اور آئین کو نقصان نہیں پہنچا سکتا‘‘۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ جنرل راحیل شریف ایک پروفیشنل سولجر ہیں جنکا تعلق اس خاندان سے ہے جنہوں نے دفاع پاکستان کے لیے اپنی جانوں کے نذرانے پیش کئے اور اعلیٰ ترین ملٹری اعزاز نشان حیدر سے نوازا گیا۔ انہوں نے کہا کہ پاک فوج جنرل راحیل شریف کی کمانڈ میں جب دہشتگردی کے خلاف کامیابی سے برسرپیکار ہے اس وقت وزیراعلیٰ کے ایسے بیانات انکی دہشتگردی کے خلاف جنگ سے توجہ ہٹا تو نہیں سکتی لیکن یہ کہنا کہ صرف جنرل راحیل شریف آئین اور جمہوریت کے امین ہیں باقی سول سوسائٹی کے ساتھ بے انصافی ہو گی کیونکہ وہ بھی آئین اور جمہوریت میں غیر متزلزل یقین رکھتی ہے۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پنجاب کے وزیر اعلیٰ کا مذکورہ بیان سیاق و سباق سے عاری لگتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اسکو ان حلقوں میں بھی پسند نہیں کیا جائیگا جنکے لیے دیا گیا ہے، عام لوگ بھی اسکو غیرضروری سمجھیں گے۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ وزیراعلیٰ کو حکومت کے معاملات پر پوری توجہ دینی چاہیے کیونکہ مہنگائی، بے روزگاری، غربت، امن عامہ کی بگڑتی ہوئی صورتحال اور لوڈشیڈنگ کے عذاب نے لوگوں کا جینا محال کر دیا ہے اور اب انکو سیلاب کی تباہ کاریوں کا سامنا ہے۔ میاں منظور احمد وٹو نے سانحہ ماڈل ٹاؤن کے ملزمان کو جلد از جلد قانون کے کٹہرے میں پیش کرنے کی ضرورت پر زور دیا تا کہ انصاف کے تقاضے جلد از جلد پورے ہوں۔

وٹو

مزید : صفحہ آخر