بھارت نے لداخ میں ڈیم مکمل کر لیا اسلام آباد بھی محفوظ نہیں رہے گا ،حافظ سعید

بھارت نے لداخ میں ڈیم مکمل کر لیا اسلام آباد بھی محفوظ نہیں رہے گا ،حافظ سعید ...

                                          لاہور (سٹاف رپورٹر) امیر جماعة الدعوة پاکستان پروفیسر حافظ محمد سعید نے کہا ہے کہ ملک میں سیاسی ہیجان پیدا کیا گیا ہے یہ آپس میں لڑائی جھگڑوں کا وقت نہیں ہے ۔ حکمران و سیاستدان باہمی اختلافات ترک کر کے سیلاب متاثرین کی مدد کا فریضہ سرانجام دیں۔بھارت کو آبی جارحیت سے روکا جائے ۔بھارت پاکستا ن کے خلاف آبی جارحیت کا مرتکب ہورہا ہے مگر عالمی سطح پر اس حوالے سے مکمل خاموشی ہے ۔ بھارت مقبوضہ کشمیر میں جنگی بنیادوں پر ڈیم تعمیر کر کے پاکستان کو معاشی طور پر اپاہج بنانے کی خوفناک منصوبہ بندی پر عمل پیرا ہے۔ اس کی آبی جارحیت سے پاکستان کی زراعت وصنعت شدید خطرات سے دوچار ہے۔ انڈیانے لداخ میں ڈیم مکمل کر لیا تو اسلام آباد بھی محفوظ نہیں رہے گا۔ جماعةالدعوة کے رضاکار سیلاب سے متاثرہ ہر علاقے میںامدادی سرگرمیاں جاری رکھے ہوئے ہیں۔ موٹر بوٹس کے ذریعہ سینکڑوں افراد کو ریسکیو کیا گیا ہے۔متاثرین کو انکے سامان اور مویشیوں سمیت محفوظ مقامات پر منتقل کرنے کے علاوہ پکی پکائی خوراک ، صاف پانی اور دیگر اشیاءتقسیم کی جارہی ہیں۔مودی کی سیلاب زدگان کی مدد کی پیشکش پاکستانی قوم کے زخموں پر نمک چھڑکنے کے مترادف ہے۔ جماعة الدعوة مقبوضہ کشمیر کے سیلاب زدگان کی مدد کے لئے تیار ہے۔وہ سوموار کو سیلاب متاثرہ علاقوں کے دورہ کے بعدرانا ٹاﺅن میں فلاح انسانیت فاﺅنڈیشن کی طرف سے لگائے گئے امدادی کیمپ پرپریس کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے۔ اس موقع پر جماعة الدعوة لاہور کے امیر مولانا ابوالہاشم،مرکزی ترجمان محمد یحییٰ مجاہد، مولانا محمد ادریس فاروقی، حافظ ابوالحسن و دیگر بھی موجود تھے۔ حافظ محمد سعید نے سیلاب متاثرہ خاندانوںمیں خشک راشن اور بچوں میں کھانے پینے کی اشیاءبھی تقسیم کیں۔رانا ٹاﺅن امدادی کیمپ پر گذشتہ روز150خاندانوںمیں تقسیم کیا گیا راشن ایپکا یونین پنجاب کے صدر میاں محمد مصطفیٰ کی طرف سے دیا گیا تھا۔جماعةالدعوة کے سربراہ حافظ محمد سعید نے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ آزاد کشمیر سے قبل مقبوضہ کشمیر میں سیلاب آیا تھا اور وہاں کے علاقے بہت زیادہ متاثر ہوئے ہیں ،بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کی آزاد کشمیر میں مدد کی پیشکش سنگین مذاق ہے۔مودی پاکستان کے عوام کے دل جیتنے کی کوشش کر رہا ہے اسے یہ بھی واضح کرنا ہو گا کہ پاکستان میں سیلاب سے ہونے والے تمامتر نقصانات کا ذمہ دار بھی وہ ہے ،مقبوضہ کشمیر میں بھی سیلاب سے تباہی ہوئی مودی حکومت وہاں تو کچھ نہیں کر سکی آزاد کشمیرمیںکیا کرے گی۔ انہوںنے کہاکہ سیلا ب کے بعد فلاحی تنظیمیں لوگوں کی مدد کے لئے نکلیں خوش آئند بات ہے ،جماعة الدعوة نے بھی سیلاب متاثرہ تمام علاقوں میں کیمپ لگا دیئے ہیں ،ریسکیو ٹیمیں موجود ہیں جو لوگوں کو سیلابی پانی سے نکال کر محفوظ مقامات پر منتقل کر رہی ہیں،جماعة الدعوة کے سینکڑوں رضاکار موٹر بوٹس کے ذریعے متاثرین کا سامان منتقل کر رہے ہیں،مویشیوں کو نکالا جا رہا ہے،پانی میں گھرے افراد تک پکی پکائی خوراک پہنچائی جا رہی ہے ،جماعة الدعوة نے کھانے کا وسیع تر انتظام کیا ہے ،جنوبی پنجاب و دیگر علاقوں میں جہاں سیلاب کے خطرات بڑھ رہے ہیں وہاں جماعة الدعوة کے رضاکار امدادی تیاریوں میں مصروف ہیں۔حافظ محمد سعید نے کہاکہ حکومت جگہ جگہ سیلاب زدگان کو حوصلہ دے رہی ہے یہ اچھی بات ہے لیکن مسئلے کا حل نہیں ،اصل سبب کو ختم کرنے کی ضررت ہے ،اگر انڈیا کی آب دہشت گردی کو نہ روکا گیا تو پاکستان کو مزید مسائل کا سامنا کرے پڑے گا۔ہم سمجھتے ہیں کہ یہ اختلاف کا وقت نہیں حکمران،سیاستدان سب اپنی اپنی ذمہ داریاں ادا کریں ،قوم کو بھی متحد ہونا چاہئے اور ایک ملت بن کر شکل وقت میں سیلاب متاثرین کی مدد کی جائے ۔ انہوںنے کہاکہ سیلاب کی صورتحال کو سب کو دیکھنا چاہئے ،آبی جارحیت،بیرونی حملوں کے ساتھ کنٹرو ل لائن پر فائرنگ ہو رہی ہے،لاشیں گر رہی ہیںلیکن پاکستان میں سیاسی کیفیت ہے کسی کو کچھ پرواہ نہیں،یہ زندہ قوموں کی علامت نہیں ،دشمن خوفناک منصوبے بنائے بیٹھا ہے ،ہمیںاپنے گھر کی حفاظت کرنی چاہئے۔انہوںنے کہاکہ پاکستان میں سیلاب وسیع علاقے میں پھیل چکا ہے ،پہلے مرحلے میں شدید بارشوں کے پانی کی وجہ سے سیلاب آیا تو دوسری جانب انڈیا نے بغیر کسی اطلاع کے تین بار پانی چھوڑا۔اب جہاں سے پانی کے ریلے گزر رہے ہیں وہاں شدید تباہی ہوئی ہے۔انہوں نے کہا کہ انڈیا کی آبی جارحیت کو روکا جائے اس نے کشمیر میں62ڈیم بنائے لداخ کے علاقے میں ایک ڈیم مکمل ہو رہا ہے جس میں دریائے سندھ کی طرف آنے ولا 45فیصد پانی ذخیرہ ہو گا اور جب انڈیا نے اس ڈیم سے پانی چھوڑا تو پھر اسلام آباد اوردیگر اونچے علاقوں میں بھی پانی آسکتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ پاکستان اور آزاد کشمیر میں جماعة الدعوة کے ہزاروں رضاکار سیلابی علاقوں میں کام کر رہے ہیں،جماعة الدعوة مقبوضہ کشمیر میں بھی اپنے رضاکار بھیج کر امدادی کام کر سکتی ہے کیونکہ پاکستان اور کشمیر ایک ہیں مودی نے تو پاکستان کے ساتھ مذاق کیا ہم سنجیدگی سے کہتے ہیں کہ مقبوضہ کشمیر کے سیلاب زدگان کی مدد کے لئے تیار ہیں۔امیر جماعةالدعوةلاہور مولانا ابو الہاشم نے کہاکہ جماعةالدعوة کے رضاکار پچھلے تین دن سے راناٹاﺅن، رچناٹاﺅن،فیروز والا،حیدر روڈو دیگر متاثرہ علاقوںمیں کشتیوں کے ذریعہ پانیوںمیں پھنسے افراد تک امداد پہنچا رہے ہیں۔ ایک ہزار متاثرین میں روزانہ پکا پکایا کھانا تقسیم کیاجارہا ہے۔

مزید : صفحہ اول