ڈاکٹر فاروق ستار کا پی ایس 127 میں دھاندلی کا الزام، 52 پولنگ سٹیشنز کے فارم 14 نہیں دیے جارہے: سربراہ ایم کیو ایم

ڈاکٹر فاروق ستار کا پی ایس 127 میں دھاندلی کا الزام، 52 پولنگ سٹیشنز کے فارم 14 ...
ڈاکٹر فاروق ستار کا پی ایس 127 میں دھاندلی کا الزام، 52 پولنگ سٹیشنز کے فارم 14 نہیں دیے جارہے: سربراہ ایم کیو ایم

  


کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک) ایم کیو ایم پاکستان کے سربراہ ڈاکٹر فاروق ستار نے پی ایس 127 میں شکست تسلیم کرنے سے انکار کرتے ہوئے پیپلز پارٹی پر دھاندلی کا الزام لگادیا۔

سندھ اسمبلی کے حلقہ پی ایس 127 کا غیر حتمی اور غیر سرکاری نتیجہ آنے کے بعد ہنگامی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر فاروق ستار کا کہنا تھا کہ ضمنی انتخاب میں سازش کی گئی اور ہر حال میں ایم کیو ایم کو ہرانے کی کوشش کی گئی ہے۔ ہم کچھ معلومات کا انتظار کر رہے ہیں جس کے بعد ہم ٹربیونل یا عدالت جاسکے تو جائیں گے اور اگر ہم ہار چکے ہوئے تو اپنی شکست تسلیم کریں گے لیکن اس سے پہلے شکست تسلیم نہیں کرتے۔

پی ایس 127سے ایم کیوایم مائنس،پیپلز پارٹی کا تیر نشانے پر جا لگا ،کارکنوں کا جشن ،مٹھائیاں تقسیم، الیکشن کی مکمل تفصیلات جانئے

انہوں نے دھاندلی کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ ضمنی الیکشن میں ہمیں پانچ ہزار ووٹوں سے ہارا ہوا دکھایا گیا ہے لیکن حقیقت کچھ اور ہے۔ ہمارے پاس 134 میں سے 82 پولنگ سٹیشنز کے فارم 14 آئے ہیں جبکہ باقی 52 سٹیشنز کے فارم 14 ہمیں نہیں ملے۔ ہمارا امیدوار ریٹرننگ افسر کے پاس بیٹھا ہوا ہے لیکن ہمیں فارم 14 نہیں دیے جارہے۔

انہوں نے بتایا کہ 82 پولنگ سٹیشنز پر ہمیں ساڑھے 14 ہزار ووٹ ملے ہیں جبکہ ہمارے مخالف امیدوار کو 5 ہزار ووٹ ملے ہیں اور ہماری لیڈ ساڑھے 9 ہزار ووٹوں کی ہے۔ سوچنے کی بات یہ ہے کہ 82 پولنگ سٹیشنز میں ہماری لیڈ ساڑھے 9 ہزار کی ہے لیکن باقی کے 52 پولنگ سٹیشنز میں ہمیں پانچ ہزار ووٹوں سے ہرادیا گیا۔ فارم 14 نہ ملنے کا مطلب ہے کہ ان 52 پولنگ سٹیشنز پر دھاندلی ہوئی ہے۔

مزید : قومی /اہم خبریں