پنجاب میں رینجرز کو محدود اختیارات دینے کا فیصلہ

پنجاب میں رینجرز کو محدود اختیارات دینے کا فیصلہ

لاہور(+جنرل رپورٹر +خبر نگار خصوصی)حکومت پنجاب نے صوبے میں کالعدم تنظیموں، دہشتگردوں اور ان کے سہولت کاروں کے خلاف آپریشن کیلئے رینجرز کو اختیارات دینے کا حتمی فیصلہ کر لیا ، رینجرز کو 60روز کیلئے اختیارات دینے کے حوالے سے صوبائی محکمہ داخلہ نے وزارت قانون سے مشاورت کے بعد سمری وزیر اعلیٰ کو ارسال کر دی ،جوایوان وزیراعلیٰ کو گزشتہ روز موصول ہو گئی ۔بھجوائی گئی سمری کے مطابق رینجرز اختیارات ملنے کے باوجود آپریشن کیلئے بااختیار نہیں ہوں گے کسی بھی آپریشن سے قبل اپیکس کمیٹی سے منظوری لے گی جبکہ اکیلے آپریشن نہیں کر سکے گی۔متعلقہ پولیس اور جے آئی ٹی سے مشاورت اور مدد کے علاوہ رینجرز نیشنل ایکشن پلان میں شامل اداروں سے ضرورت پڑنے پر معلومات کا تبادلہ کرنے کی پابند ہوگی۔ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیر اعلیٰ پنجاب صوبائی کابینہ سے مشاورت کے بعدباقاعدہ طور پرچند روز میں منظوری دیں گے ۔سمری کے مطابق پنجاب میں بھی رینجرز آرڈیننس 1959کے تحت 60روز کیلئے محدوداختیارات دیئے جائیں گے، جس کے تحت رینجرز صوبے میں کاؤنٹر ٹیررازم ڈیپارٹمنٹ کے ساتھ مل کر آپریشن کرے گی۔رینجرز کے اس آ پریشن کا بنیادی حدف دہشگردوں،کالعدم تنظیموں اور ان کے سہولت کاروں کے خلاف کارروائی ہوگا۔ذرائع کا مزید کہنا ہے کہ چند روز قبل اس حوالے سے وزیراعلیٰ پنجاب کی آرمی چیف کے ساتھ ہونے والی ملاقات میں پنجاب کے اندر رینجرز کو ابتدائی طور پر 60روز کے لئے محدود بنیادوں پر محدود اختیارات دینے پر اتفاق ہو گیا تھا جس کیلئے طے پایا تھا کہ رینجر ز کے پی کے ،سندھ کے ساتھ ملنے والی پنجاب کی سرحدوں کے وہ علاقے جہاں دہشتگردوں یا ان کے سہولت کاروں کی موجودگی کی اطلاعات ہیں وہاں سے آپریشن کا آغاز کرے کی تاہم آپریشن کرنے سے قبل رینجرز حکومت پنجاب سے معلومات کا تبادلہ کرے گی اور اس کیلئے اگر آپریشن ضروری ہوا تو اپیکس کمیٹی سے منظوری حاصل کر ے گی جس پر 2روز میں سمری تیار کر کے وزارت داخلہ نے وزیر اعلیٰ کو بھجوا دی ۔واضح رہے کہ اپوزیشن جماعتیں پہلے سے ہی پنجاب میں رینجرز کے اختیارات کا مطالبہ کر رہی تھیں ۔

رینجرز/اختیارات

مزید : صفحہ اول