جی پی او چوک میں وکلاء اورسول سوسائٹی کی ’’فتح قادیانیت‘‘ کے نام سے تقریب

جی پی او چوک میں وکلاء اورسول سوسائٹی کی ’’فتح قادیانیت‘‘ کے نام سے تقریب

لاہور(نامہ نگار خصوصی ) لاہور کے جی پی او چوک میں وکلاء اورسول سوسائٹی نے7ستمبر 1974ء کو قادیانیوں کو غیر مسلم قرار دینے کے حوالے سے ’’فتح قادیانیت‘‘ کے نام سے خصوصی تقریب اور مظاہرہ کیا ۔تقریب و مظاہرہ کا اہتمام الامہ لائرزفورم اور حرمت رسولؐ لائرز موومنٹ نے گستاخانہ خاکوں اور فلموں کے خلاف اپنے ہفتہ وار احتجاج کے موقع پر کیا تھا جسے مسلسل 188ہفتے مکمل ہو گئے ۔مظاہرین سخت دھوپ میں کھڑے ہو کر ’’تاج و تخت ختم نبوت،زندہ باد ‘‘،’’حرمت رسولؐ پر جان بھی قربان ہے ‘‘ اور ’’گستاخ رسول کی ایک سزا، سر تن سے جدا‘‘ کے نعرے لگاتے رہے۔مظاہرہ سے خطاب کرتے ہوئے مخدوم جمیل فیضی ‘راؤ طاہرشکیل ‘علی عمران شاہین‘ میاں محمد اشرف عاصمی‘ چودھری عبدالرؤف ‘علامہ ممتازاعوان‘ طلحہ فیضی‘ڈاکٹر شاہد نصیر ودیگر نے کہاکہ 7ستمبر1974ء کادن امت مسلمہ کے لئے پاکستان ہی نہیں ،عالمی سطح پر انتہائی اہمیت کا حامل دن ہے۔ یہ وہ یادگاردن ہے جب ناموس رسالت کے دفاع میں پاکستان کی قومی اسمبلی کی جانب سے متفقہ طور پر قادیانیوں کوکافر قرار دیاگیاتھا۔ ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ پاکستان اس حوالے سے عالمی سطح پربھی تحریک چلائے تاکہ ہر مقدس ہستی کی توہین کو روکا اورعالمی امن یقینی بنایاجاسکے۔ مظاہرین نے مطالبہ کیا کہ پاکستان کی طرح عالمی سطح پر بھی توہین رسالت رکوانے اورحرمت رسولؐ کے دفاع وتحفظ کے لیے قوانین بنوائے جائیں تاکہ عالمی امن کویقینی بنایاجاسکے۔ہم پاکستان میں تحفظ ناموس رسالت کے قانو ن میں کسی بھی قسم کی تبدیلی کی اجازت نہیں دیں گے۔

مزید : صفحہ آخر