سالانہ انٹر نیشنل ختم نبوت کانفرنس میں منظور ہونے والی قراردادیں

سالانہ انٹر نیشنل ختم نبوت کانفرنس میں منظور ہونے والی قراردادیں

  



چناب نگر( نامہ نگار)یہ اجتماع برما ،فلسطین ،کشمیر ،شام میں مسلمانوں پرہونے والے ہولناک مظالم کی شدید الفاظ میں مذمت کر تا ہے اور اقوام متحدہ اور انسانی حقوق کی عالمی تنظیموں سے مطالبہ کر تا ہے کہ وہ برما میں مسلمانوں پر ہو نے والے وحشیانہ مظالم کا نوٹس لیں اور وہاں قتل عام رکوائیں ،اور مسلم ممالک کے حکمرانوں سے مطالبہ کر تا ہے کہ برما کے ساتھ اپنے سفارتی تعلقات ختم کرتے ہو ئے برما کے سفیر کواحتجا جاً ملک بدر کر یں ۔

* یہ اجتماع پاکستان کے خلاف بولنے والوں کیخلاف سخت کاروائی کا مطالبہ کرتاہے اور پاکستان کی ترقی و خوشحالی کے ضامن ’’سی پیک ‘‘ منصوبہ کو سبو تاژ کر نے کیلئے بین الاقوامی قوتوں اور ہمسایہ ممالک کی ریشہ دوانیوں کی شدید مذمت کر تا ہے اور مطالبہ کرتا ہے کہ اغیار کے مفادات کی تکمیل کیلئے ملک میں عدم استحکام پیدا کر نے والے عناصر کے خلاف ٹھوس اقدامات کئے جائیں ۔

* یہ اجتما ع افواج پاکستان کے ان جا نبازوں کو خراج عقیدت پیش کر تا ہے جنہوں نے 1965سے لیکر ضرب عضب و آپریشن رد الفساد تک ملک کی سلامتی و دفاع کیلئے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا، اور آرمی چیف جنرل قمر با جوہ کے حالیہ بیان جس میں انہوں نے ملک دشمن قوتوں کو بڑی جرات کے ساتھ للکارا ہے خراج تحسین پیش کرتاہے ۔

*یہ اجتماع ملک میں امن وا مان قائم کر نے کی خاطر اور دہشت گردوں کے خلاف جا ری آپریشن رد الفساد کی مکمل حمایت کرتے ہو ئے اپنے مکمل تعاون کا یقین دلا تا ہے ،اور ملک کی خاطر اپنی جانیں قر بان کرنے والے فوج،پولیس وفورسززکے جوانوں کوخراج تحسین پیش کر تا ہے ۔

*یہ اجتماع نصاب تعلیم میں سے جہاد ،سیرت نبوی و دیگر اسلامی مضامین کو حزف کر نے کی شدید الفاط میں مذمت کر تا ہے اور مطالبہ کر تا ہے کہ نصاب تعلیم میں جہاد ،سیرت نبوی و دیگر اسلامی مضامین دو بارہ شامل کیئے جائیں ۔

* یہ اجتماع ملک بھر میں قادیانیوں کی بڑھتی ہو ئی اسلام دشمن سرگرمیوں پر سخت تشویش و اضطراب کا اظہار کرتا ہے اور اس سلسلہ میں حکومتی اداروں کی غفلت کو افسوسناک قرار دیتے ہو ئے حکومت سے مطالبہ کر تا ہے کہ ملک کی نظریاتی سرحدوں کی حفاظت اور دستور کی اسلامی دفعات کے تقاضوں کو پورا کر تے ہو ئے قادیانیوں کی قانون شکن سر گرمیوں کانو ٹس لیا جائے اور انہیںآئین پاکستان کا پابندکیا جائے پاکستان کے اساسی نظریہ اور اس کے مکینوں کے مذہبی جذبات سے کھیلنے کی اجازت نہ دی جائے ۔

* قادیانی اسلام اور پاکستان کے خلاف ریشہ دوانیوں میں مصروف ہیں اور سازشی انداز میں حکومتی حلقوں میں اپنا اثر رسوخ بڑھا کر اپنے دیرینہ خواب کی تکمیل کے لئے مصرو ف عمل ہیں ملک کے جغرافیائی اور نظریاتی دفاع کا تقا ضا ہے کہ قادیانیوں کی سر گرمیوں پر پابندی لگائی جائے ۔اور تمام کلیدی عہدوں سے انہیں برطرف کیا جائے ۔

*چناب نگر میں قادیانیوں کی جارحانہ سرگرمیوں میں مسلسل اضافہ ہو ر ہا ہے ان کے دہشت گرد موبائل گاڑیوں پر جدید اسلحہ سے لیس ہو کر گشت کر تے ہیں اور ایلیٹ فورس سے مشابہہ یونیفارم استعمال کر تے ہیں نیز اس گاڑی پر گشت کر نے والے سادہ لوح مسلمانوں اور عام گزرگاہوں سے آنیوالوں کو ہراساں کر تے ہیں ان پرتشدد کر تے ہیں پولیس اور انتظامیہ کی موجودگی میں قادیانیوں کاحق نہیں بنتا ۔

*کمپیوٹرائزڈ شناختی کارڈ میں مذہب کے خانہ کا اضافہ کیا جائے یا مسلمانوں کے شناختی کا رڈ کا رنگ الگ الگ کر کے دستوری اور قانونی تقاضوں کے مطابق مذہبی امتیاز کو یقینی بنایا جائے ۔

*قادیانی ٹی وی چینل (ایم ٹی اے ) مسلسل شر انگیزی پھیلا رہا ہے اور مسلمانوں کے عقائد و نظریات کی توہین و تضحیک کی جارہی ہے حکومت فوری طور پر اس کی نشریات پر پابندی لگائی جائے اور قا دیانی جرائد و رسائل کے ڈیکلریشن منسوخ کیئے جائیں ۔

*اسلامی نظریاتی کونسل کی سفارشات کے مطابق مر تد کی شرعی سزا نافذ کی جائے ۔

*یہ اجتماع حکومت سے مطالبہ کر تا ہے کہ تعلیمی نصاب میں عقیدہ ختم نبوت کے متعلق مضامین اور اسباق شامل کئے جائیں تاکہ نوزائیدہ نسل میں تحفظ ختم نبوت اور ناموس رسالت ﷺ کے سلسلہ میں شعور پیدا کیا جاسکے۔

*حکومت نے تمام اقلیتوں کے اوقاف سرکاری تحویل میں لیئے ہوئے ہیں لیکن قاد۸یانی اوقاف حکومتی تحویل میں نہیں لیئے گئے یہ اجتماع حکومت سے مطالبہ کر تا ہے کہ دوسرے غیر مسلموں کے اوقافوں کی طرح قادیانی اوقاف کو بھی حکومتی تحویل میں لیا جائے ۔

*قادیانی خود کو مسلمان ظاہر کر کے اسلامی شعائر اور اور مسلمانوں کے مذہبی علامات کا بے دریغ استعمال کر رہے ہیں یہ اجتماع حکومت سے مطالبہ کر تا ہے کہ امتناع قادیانیت آرڈیننس پر موئثر عمل درآمد کرایا جائے اور قادیانیوں کو اسلام کا ٹائٹل استعمال کر نے سے روکا جائے ۔

*پاکستان اسلام کے نام پر حاصل کیا گیا اور ہزاروں مسلمانوں نے اس کے حصول کیلئے اپنی جانوں کے نذرانے پیش کئے لہذٰا اسلام کے نام پر معرض وجود میں آنے والے ملک پاکستان میں اسلامی شرعی نظام نافذ کیا جائے اور سودی نظا م کا خاتمہ کیا جائے۔

*یہ اجتماع ملک میں ہونے والی دہشت گردی، قتل وغارت، اغوا وڈکیتی اور لاپتہ افراد کے بارہ میں پیدا ہونے والی صورتحال پر گہری تشویش کا اظہار کرتا ہے اور حکومت سے مطالبہ کرتا ہے کہ تمام سیاسی پارٹیاں اپنی مقبولیت کا تحفظ کرنے کی بجائے عوام کے جان ومال اور عزت وآبرو کی حفاظت کو یقینی بنائیں۔

*ملک کا اسلامی ونظریاتی تشخص برقرار رکھنے کے لئے تعلیمی نصاب میں عقیدہ ختم نبوت کی اہمیت وفضیلت پر مشتمل اسباق شامل کئے جائیں اور نصاب تعلیم کو سیکولر بنانے کی بجائے اسلامی ودستوری نصاب بنایا جائے اور پاکستان میں شریعت کا نظام نافذ کیا جائے ۔

*یہ اجتماع حکومت سے مطالبہ کر تا ہے کہ دینی مدارس کے خلاف ناروا سلوک بند کیا جائے مذہبی رہنماؤں و علماء کرام خطباء عظام کے خلاف فورتھ شیڈول جیسے ظالمانہ ہتھکنڈوں کا استعمال بند کیا جائے ،مدارس کی حب الوطنی و دوستی کو مشکوک نہ بنا یا جائے ۔

*یہ اجتماع ملک کی مقتد ر قوتوں سے مطالبہ کر تا ہے کہ بد عنوان ،کرپٹ سیا ستدانوں ،ججوں ،جرنیلوں کا بلا تفریق احتساب کیا جائے اور ملک کی دولت کو لو ٹنے والے افراد کو نشان عبرت بنا یا جائے ۔

*یہ اجتماع حکومت سے مطالبہ کر تا ہے کہ 7ستمبر کویوم ختم نبوت کا نام دیا جائے اور اس دن کو سر کا ری سطح پر منا یا جائے ،چونکہ اس دن 1974کو پاکستان کی قومی اسمبلی نے منکرین ختم نبوت قادیانی و لاہوری گروپ کو متفقہ طور غیر مسلم اقلیت قرار دیا تھا ۔

*یہ اجتماع دینی جماعتوں اور دینی مدارس کی نمائندگی کرتے ہو ئے اس بات کا بر ملا اظہار کر تا ہے کہ دینی حلقے اتنے ہی محب وطن ہیں جتنا کو ئی اور دعویٰ کر سکتا ہے ،دینی حلقوں کو دہشت گر دی کا طعنہ نہ دیا جائے مدارس و مساجد امن و سلامتی اور تعلیم و تدریس کے مراکز ہیں وہ قانون کے مطابق کام کررہے ہیں

*یہ اجتماع آئین سے دفعہ 62/63کے اخراج کی کو ششوں کی مذمت کرتے ہو ئے اس عزم کا اظہار کر تا ہے کہ آئین کی اسلامی دفعات کو ہر گز نہ چھیڑ ا جا ئے ۔

قراردادیں

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر


loading...