روہنگیامسلمانوں کے ساتھ ہیں ، پختونوں کی نسل کشی پر دنیا کی خاموشی تا ابدسوالیہ نشان رہے گی : میاں افتخار حسین

روہنگیامسلمانوں کے ساتھ ہیں ، پختونوں کی نسل کشی پر دنیا کی خاموشی تا ...

  



پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی جنرل سیکرٹری میاں افتخار حسین نے روہنگیا مسلمانوں پر ہونے والے بد ترین تشدد اور ان کے قتل عام کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ اے این پی روہنگیا مسلمانوں کے ساتھ ہے اور دنیا میں جہاں کہیں بھی ظلم و جبر اور تشدد ہو باچا خان کے پیروکار اور عدم تشدد کے فلسفے پر کاربند رہتے ہوئے اس کی مخالفت کرتے رہیں گے، ان خیالات کا اظہار انہوں نے پی کے 12بختئی خٹک نامہ میں ایک بڑے شمولیتی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا ، اس موقع پر پی ٹی آئی اور پیپلز پارٹی سے تقریباً 70سے زائد افراد نے اپنے خاندان اور دیگر ساتھیوں سمیت اے این پی میں شمولیت کا اعلان کیا ، میاں افتخار حسین نے پارٹی میں شامل ہونے والوں کو سرخ توپیاں پہنائیں اور انہیں باچا خان بابا کے قافلے میں شمولیت پر مبارکباد پیش کی ، اپنے خطاب میں انہوں نے کہا کہ برما میں مسلمانوں پر ہونے والے مظالم پر گہری نظر رکھی ہوئی ہے تاہم انتہائی افسوسناک پہلو یہ ہے کہ 35سال سے پختونوں کو دہشت گردی کے خلاف پرائی جنگ کا ایندھن بنایا گیا لیکن دنیا خاموش تماشائی بنی رہی ، انہوں نے کہا کہ کسی عالمی طاقت اور دنیا میں کسی بھی میڈیا نے دنیا بھی کی نظر اس جانب مبذول نہیں کرائی جبکہ ہزاروں پختون آگ کی اس بھٹی کی نذر ہوگئے ، انہوں نے کہا کہ ظلم و جبر کا سلسلہ ہنوز جاری ہے غرضیکہ آج بھی خطے کی دونوں جانب پختونوں کو ہی قربانی بکرا بنایا گیا ہے ،میاں افتخار حسین نے کہا کہ پاکستان اور افغانستان کی سر زمین کیلئے تین بڑی قوتیں نبرو آزما ہیں،اور ان سپر پاورز کے درمیان مفادات کی رسہ کسی کے نتیجے میں تیسری عالمی جنگ چھڑ سکتی ہے،لہٰذا حکومت کو ہوش سے کام لینا ہوگا۔صوبائی حکومت کی ناقص کارکردگی کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ناکام صوبائی حکومت نے عوام کو ناکوں چنے چبوا کر بے حال کر دیا ہے اور موجودہ صورتحال میں پختون جنازے اٹھانے پر مجبور ہیں، ڈینگی نے صوبائی حکومت کی کارکردگی کا پول تو کھول دیا ہے تاہم سزا غریب عوام کو بھگتنا پڑی،، صوبے بالخصوص پشاور میں صورتحال انتہائی سنگین ہو چکی ہے آئے روز ڈینگی سے اموات کا سلسلہ جاری ہے جبکہ حکمران خاموش تماشائی بنے بیٹھے ہیں ، انہوں نے کہا کہ وزیر اعلیٰ ڈینگی کے تدارک کیلئے تو کچھ نہ کر سکے اب عوام کیلئے قبرستان کی نشاندہی کی ہدایت کر دی گئی ہے ، انہوں نے کہا کہ وزیر صحت صرف بیانات تک محدود ہیں جبکہ عوام آئے روز جنازے اٹھا رہے ہیں،فاٹا اصلاحات کے حوالے سے میاں افتخار حسین نے کہا کہ نواز شریف نے پختونوں کو بے پناہ نقصان پہنچایا اور ان کے حقوق غصب کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی ، انہوں نے کہا کہ نواز شریف اور عمران خان پختونوں کے خلاف ایک پیج پر متفق ہیں اور ان کے درمیان اختلاف صرف کرسی اقتدار کیلئے ہے، میاں افتخار حسین نے کہا کہ فاٹا کو خیبر پختونخوا میں ضم کرنے کے حوالے سے تمام تیاریاں مکمل تھیں لیکن نواز شریف نے ایک بار پھر عین وقت پر قبائلی عوام کو دھوکہ دیا اور آئینی اصلاحات سے مکر گئے اب تو لگتا ہے جیسے نا اہل وزیر اعظم کو پختونوں اور قبائلیوں کی آہیں لے ڈوبی ہیں،انہوں نے کہا کہ فاٹا کے عوام بنیادی ضروریات سے محروم ہیں اور تعلیم کا وہاں تصور تک نہیں، جبکہ فاٹا کا تمام فنڈ مرکز ہڑپ کر جاتا ہے کیونکہ وہ نہیں چاہتے کہ پختون متحد ہو سکیں،انہوں نے کہا کہ 14ستمبر کو فاٹا اصلاحات بارے اے این پی نے آل پارٹیز کانفرنس طلب کی ہے جس میں تمام سیاسی جماعتوں کو دعوت دی جائے گی ،انہوں نے کہا کہ وقت کا تقاضا ہے کہ پختون آپس میں اتحاد و اتفاق کا مظاہرہ کریں ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر