سعودی عرب برما کے مظلوم مسلمانوں کا سب سے بڑا حمایتی ،برمی پناہ گزینوں کو جو استحکام حرمین شریفین میں نصیب ہوا وہ دنیا کے کسی ملک میں نہیں ملا : ڈائریکٹر روہنگیا میڈیا سینٹر

سعودی عرب برما کے مظلوم مسلمانوں کا سب سے بڑا حمایتی ،برمی پناہ گزینوں کو جو ...
سعودی عرب برما کے مظلوم مسلمانوں کا سب سے بڑا حمایتی ،برمی پناہ گزینوں کو جو استحکام حرمین شریفین میں نصیب ہوا وہ دنیا کے کسی ملک میں نہیں ملا : ڈائریکٹر روہنگیا میڈیا سینٹر

  



جدہ( ڈیلی پاکستان آن لائن) روہنگیا میڈیا سینٹر کے ڈائریکٹر صلاح عبدالشکور نے سعودی عرب کو روہنگیا مسلمانوں کا سب سے بڑا مددگار قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ سعودی عرب کی جانب سے گذشتہ چند سالوں میں  لاکھوں کی تعداد میں برما کے روہنگیا مسلمانوں کو پناہ دی گئی ، برمی مسلمانوں کو یہاں بغیر کسی فیس کے اقامے جاری کئے گئے ہیں جس کے تحت انہیں یہاں تعلیم ، علاج اور نوکریوں کے مواقع میسر آئے ہیں۔

مزید پڑھیں:عامر لیاقت کو میانمار میں امیگریشن حکام نے حراست میں لے لیا

عرب ذرائع ابلاغ کی رپورٹ کے مطابق روہنگیا میڈیا سینٹر کے ڈائریکٹر صلاح عبدالشکور نے سعودی عرب کو روہنگیا مسلمانوں کا سب سے بڑا مددگار قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ سعودی عرب میں مقیم کمیونٹی کے سوا برما سے ہجرت کرنے والے روہنگیا مسلمانوں کو کسی بھی ملک میں سعودی عرب جیسا استحکام نصیب نہیں ہوا ، چار سال قبل ان کے حالات مزید بہتر بنانے کیلئے سب سے بڑا منصوبہ شروع کیا گیا جس کے تحت برمی مسلمانوں کی بڑی تعداد کو نوکریاں اورتعلیم و صحت کی سہولیات فراہم کی گئیں، سرزمین حرمین شریفین میں مقیم برمی کمیونٹی سے ہی ایسے تعلیم یافتہ اور دانش ور افراد سامنے آئے ہیں جو اراکان صوبے میں اپنے مقدمہ کی ذرائع ابلاغ ، قانون اور انسانی حقوق کے ذریعے نمائندگی کرتے نظر آتے ہیں۔

واضح رہے کہ برما کے مغربی صوبے اراکان میں بسنے والے روہنگیا مسلمانوں کی اکثریت کو کئی ماہ سے الم ناک صورت حال کا سامنا ہے جبکہ چند برس قبل روہنگیا مسلمانوں نے مکہ مکرمہ کا رخ کیا تھا۔روہنگیا میڈیا سینٹر کے ڈائریکٹر صلاح عبدالشکور نے بتایا کہ حکومتی ظلم و زیادتی سے تنگ آ کر بعض روہنگیا مسلمانوں نے سعودی عرب ہجرت کی اور مکہ مکرمہ پہنچ گئے جنہیں”عبادت کے لیے قیام” کے ویزے جاری کیے، برمی کمیونٹی کو سعودی عرب میں ہر قسم کی دیکھ بھال ، سرپرستی اور ہمدردی ملی جو انہوں نے اپنے وطن میانمار میں کبھی دیکھی نہ تھی۔صلاح نے بتایا کہ چار سال قبل مملکت میں برمی کمیونٹی کے حالات کی درستگی کے لیے سب سے بڑا منصوبہ شروع کیا گیا، اس دوران انہیں بنا فیس کے چار سالوں کی مدت کے اقامے جاری کیے گئے جن کے تحت ان کو تعلیم ، علاج اور نوکریوں کے مواقع میسر آئے، مکہ مکرمہ کی انتظامیہ نے جس منصوبے پر عمل درآمد کی ذمے داری سنبھالی اسے پناہ گزینوں سے متعلق اقوام متحدہ کے ہائی کمیشن کی تصدیق کی بنیاد پر انسانی تہذیب کا سب سے بڑا منصوبہ قرار دیا گیا ، اس کے تحت ڈھائی لاکھ سے زیادہ برمی مسلمانوں کو استحکام بخشا گیا۔صلاح عبدالشکور نے باور کرایا کہ سعودی عرب دنیا بھر میں روہنگیا مسلمانوں کے مسئلے کا سب سے بڑا سپورٹر ہے، مملکت نے انہیں استحکام بخشا اور تعلیم کے مواقع فراہم کیے ہیں۔

مزید : عرب دنیا


loading...