چوہدری نثار نے ڈان لیکس کے معاملے پر پہلی مرتبہ ان باتوں سے پردہ اٹھا دیا جو اب تک کسی کے سامنے نہ آئیں تھی تہلکہ خیز انکشاف کر دیا

چوہدری نثار نے ڈان لیکس کے معاملے پر پہلی مرتبہ ان باتوں سے پردہ اٹھا دیا جو ...
چوہدری نثار نے ڈان لیکس کے معاملے پر پہلی مرتبہ ان باتوں سے پردہ اٹھا دیا جو اب تک کسی کے سامنے نہ آئیں تھی تہلکہ خیز انکشاف کر دیا

  



اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن )چوہدری نثار نے کہاہے کہ جب مشکل وقت آتاہے تو یہ ذبح بھی مجھے کرتے ہیں اور ثواب بھی خود لیتے ہیں ،ڈان لیکس پر میں چاہتاہوں کہ یہ ساری چیز سامنے آئے ،پرویز رشید اپنی کارکردگی کے باعث ذبح ہوئے ہو ں گے اس میں میرا کیا لینا دینا ہے ۔

نجی ٹی وی کے پروگرام میں خصوصی گفتگو کرتے ہوئے چوہدری نثار کا کہناتھا کہ جب میٹنگ ہوئی تو اس میں جنرل(ر) راحیل شریف ، جنرل رضوان ،نوازشریف ، اسحاق ڈار اور میں موجود تھے ،جب اس طرف سے بات شروع ہوئی تو میں بولا باقی کوئی نہیں بولا ،میں نے وضاحت مانگی ،سوالات کیے ،جب بات ہو چکی تو بعد شہبازشامل ہوئے ،تو وہاں یہ فیصلہ ہوا جو کہ میری موجودگی میں نہیں ہوا ، فیصلہ ملٹری اور پرائم منسٹر کے درمیان ہوا انکوائری ہو نی چاہیے اور وہ کمیٹی سینئر منسٹرز پر مشتمل ہو،میں نے کہا کہ منسٹرز انکوائری نہیں کرتے ،ان کی خواہش تھی کہ میں اور اسحاق ڈاراس میں شامل ہوں،لیکن میں نے کہا کہ یہ ہمارا کام نہیں ہے تو نوازشریف نے کہا جب دونوں جانب سے اعتماد ہے تو آپ کریں ،اسحاق ڈار نے اس کے باوجود اپنی مجبور ی کا اظہار کیا ،اس میٹنگ میں جو کوائف سامنے رکھے گئے وہ سب سے زیادہ ایک شخص کے بارے میں تھے ،اسحاق ڈار نے کہا کہ میری اس شخص سے بہت دوستی ہے تو میں نے کہا کہ میر ی آپ سے بھی پرانی دوستی ہے،جو کوائف سامنے رکھے گئے اس کی تحقیقات میں نے نہیں کی اس کی تحقیقات وزیراعظم سکریٹریٹ نے آئی بی سے کروائی ،جبکہ میں نے آئی بی کی رپورٹ کی بنیاد پر میں نے زبانی رپورٹ دی ،جس میں شہبازشریف بھی موجود تھے ،اسحاق ڈار اور فواد حسن فواد بھی موجود تھے ،میں نے کسی کو نہیں کہا کہ انہیں معطل کر دیں ،اس رپورٹ کے نتیجے پر پہلا فیصلہ ہوا۔چوہدری نثار کا کہناتھا کہ ڈان لیکس پر ابتدائی رپورٹ آرمی نے دی تھی اور اس کی تحقیقات وزیراعظم سکریٹریٹ کے تحت آئی بی نے تصدیق کی ۔

مزید : قومی


loading...