لاہور ہائیکورٹ، توہین عدالت کی درخواستوں پر سرکاری افسران کو نوٹس 

  لاہور ہائیکورٹ، توہین عدالت کی درخواستوں پر سرکاری افسران کو نوٹس 

  

 لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہورہائی کورٹ نے توہین عدالت کی مختلف درخواستوں پر سیکرٹری مواصلات وتعمیرات پنجاب،آئی جی پولیس،کمشنر لاہوراورایگزیکٹو ڈسٹرکٹ ایجوکیشن افسر پاکپتن کو نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کرلیا،سیکرٹری مواصلات و تعمیرات سیف انجم کے خلاف میسرز رندھاوا اینڈ کمپنی نے درخواست دائر کی ہے جس میں کہا گیاہے کہ عدالتی حکم کے باوجود اسے گورنمنٹ ڈگری کالج فار وویمن صفدر آباد کی تعمیر و آرائش کا معاوضہ ادا نہیں کیا گیا۔آئی جی پولیس کے خلاف کانسٹیبل محمد اصغر نے درخواست دائر کی ہے کہ جس میں کہاگیاہے کہ عدالتی حکم کے باجود اسے پنشن ادانہیں کی جارہی،کمشنرلاہور ذوالفقار گھمن کے خلاف باغبانپورہ کے رہائشی عمیر سعید بٹ نے درخواست دائر کی ہے جس میں کہاگیاہے کہ عدالت نے اس کے علاقہ میں قبضہ گروپ اور تجاوزات کا معاملہ دادرسی کے لئے فروری 2020ء میں کمشنر کوبھجوایاتھا لیکن عدالتی حکم پر تاحال عمل نہیں ہوا،ایگزیکٹو ڈسٹرکٹ ایجوکیشن افسر پاکپتن راجہ طارق محمود کے خلاف محکمہ تعلیم کے جونیئر کلرک غلام مرتضی نے درخواست دائر کی ہے جس میں کہاگیاہے کہ اس کو2014ء سے عارضی بنیادوں پر کام کرنے کے باوجود ریگولر نہیں کیا گیا،عدالت نے معاملہ دادرسی کے لئے ایگزیکٹو ڈسٹرکٹ ایجوکیشن افسر پاکپتن کو بھجوایاتھا لیکن عدالتی حکم پر تاحال عمل نہیں ہوا۔

نوٹس جاری 

مزید :

صفحہ آخر -