نیب کی گرفتار نہ کرنے کی یقین دہانی پر برجیس طاہر کی درخواست ضمانت نمٹا دی گئی

  نیب کی گرفتار نہ کرنے کی یقین دہانی پر برجیس طاہر کی درخواست ضمانت نمٹا دی ...

  

 لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائیکورٹ نے نیب کی طرف سے گرفتارنہ کرنے کی یقین دہانی پرمسلم لیگ (ن)کے ایم این اے برجیس طاہر کی ضمانت کی درخواست نمٹا دی،عدالت نے نیب کوہدایت کی کہ اگر برجیس طاہر کے خلاف کوئی قابل گرفتاری مواد سامنے آئے گا تو درخواست گزار کو طلبی کا نوٹس جاری کیا جائے، نیب کی طرف سے عدالت کو بتایا گیا کہ مجاز حکام نے تاحال برجیس طاہر کی گرفتاری کے وارنٹ جاری نہیں کئے، نیب کی طرف سے یقین دہانی کروائی گئی کہ دو ماہ میں انکوائری مکمل کرکے رپورٹ پیش کردی جائے گی،فاضل جج نے نیب کے وکیل سے پوچھابتائیں 6 ماہ کے دوران کیا تحقیقات کی گئی ہیں؟نیب کے پراسیکیوٹر نے کہا سر کرونا کی وجہ سے کوئی کام نہیں ہو سکا تھا اب کرونا لاک ڈاؤن ختم ہوا ہے تو دفاتر میں کام شروع ہوا ہے، فاضل جج نے کہا بتائیں کتنے وقت میں انکوائری مکمل کر کے رپورٹ جمع کروائیں گے، نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ سر دو ماہ کا وقت دے دیا جائے انکوائری مکمل کر کے رپورٹ پیش کر دیں گے، درخواست گزار برجیس طاہر کی طرف سے موقف اختیارکیاگیاکہ درخواست گزار کے خلاف2003 ء میں نیب انکوائری بند کر چکا ہے، اب جولائی 2019 ء میں نیب نے طلبی کا دوبارہ نوٹس بھیج دیاہے، نیب ایسے کیس میں طلب کر رہا ہے جو کبھی شروع ہی نہیں ہوا، نیب نے درج شکایت کو انویسٹی گیشن میں تبدیل کردیا ہے، گرفتاری کا خدشہ ہے، بعدازاں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مسلم لیگ (ن) کے رہنما برجیس طاہر نے کہا کہ احتساب صرف اپوزیشن کا نہیں حکومتی لوگوں کا بھی ہونا چاہیے،نیب بی آر ٹی اور خیبر پختونخواکے دیگر منصوبوں پر بھی کارروائی کرے،ملک کو آگے چلنے دیا جائے،احتساب کے حامی ہیں مگر یہ یکطرفہ نہیں ہونا چاہیے خواجہ سعد، رانا ثنااللہ اورشاہدخاقان عباسی کے ساتھ جو ہو رہاہے سامنے ہیں، ہمیں سیاسی انتقام کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔

درخواست ضمانت

مزید :

صفحہ آخر -