بنوں،سابقہ خاصہ دار فورس کا مطالبات کے حل کیلئے 3 دن کی ڈیڈ لائن 

بنوں،سابقہ خاصہ دار فورس کا مطالبات کے حل کیلئے 3 دن کی ڈیڈ لائن 

  

بنوں (نمائندہ خصوصی)سابقہ خاصہ دار فورس نے تبادلے اور عدم سہولیات کے خلاف حکومت کو تین دن کی ڈیڈلائن دے دی اُنہوں نے دھمکی دی کہ تین دن تک ہمارا یہ احتجاج پرامن رہے گا تین دن کے اندر مطالبات تسلیم نہ ہوئے تو آئندہ کیلئے حکمت عملی طے کریں گے بکاخیل منڈی کے مقام پر سابقہ خاصہ دار فورس کا قومی جرگہ منعقد ہوا جرگے سے ملک شروف خان,ملک اسد خان وزیر,ملک گل باز خان, ملک محمد علی,ملک دولت خان,ملک شفیع الرحمن,ملک خلیل,میر بہادر خان,ملک کاکان عرف محمد ایوب,ملک شریعت,ملک لالی زمان ودیگر نے خطاب کیا اُنہوں نے حکومت سے خفگی کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ فاٹا انضمام کا دو سال عرصہ مکمل ہونے کو ہے لیکن آج تک خاصہ دار فورس کو وہ سہولیات مہیا نہیں کی گئی ہیں جن کے وعدے کئے گئے تھے آج تک ہم نے جو ڈیوٹیاں دی ہیں اپنا ذاتی اسلحہ اور سامان استعمال کیا ہے اُنہوں نے کہاکہ ایک دوسروں کے ناموں کو نوکریاں تبدیل کرنے کا سلسلہ بند ہوا ہے جہاں پر بھی یہ سلسلہ بند ہوا ہے دوبارہ بحال کیا جائے متعدد خاصہ دارفورس کی تنخواہیں چھ چھ ماہ سے بند ہیں جلد ازجلد بحال کی جائیں جب تک پوری مراعات اور سروس بک نہیں دی جاتی اس وقت تک تنخواہوں کا سلسلہ جاری رکھا جائے جن خاصہ دار کے تبادلے ہوئے ہیں ان کی دوبارہ پرانی جگہوں پر تعیناتی کی جائے یہ ہماری درخواست ڈی آئی جی اول خان اور ڈی پی او وسیم ریاض سے ہے اُنہوں نے الزام لگایا ہے کہ یہاں ایک خود ساختہ ڈی ایس پی ملک شیر اکبر خان ہیں اس کے نام پر نوکری بھی نہیں ہیں مگر محکمہ پولیس نے ان کو تین سٹار لگائے ہیں باقی سارے ڈی ایس پیز ہیں ان سے کام لیا جائے خاصہ دار کے تبادلے سے انتشار پیدا ہوتی ہے اُنہوں نے آئی جی خیبر پختونخوا ڈاکٹر ثناء اللہ,ڈی آئی جی بنوں ریجن اول خان اور ڈی پی او وسیم ریاض سے مطالبہ کیا ہے کہ سابقہ خاصہ دار فورس کو سہولیات مہیا کی جائیں بصورت دیگراپنے جائز حقوق کیلئے احتجاج پر مجبور ہوجائیں گے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -