60ہزار افراد میں 3 ماہ تک کووڈ 19 کے اثرات برقرار رہنے کا انکشاف

     60ہزار افراد میں 3 ماہ تک کووڈ 19 کے اثرات برقرار رہنے کا انکشاف

  

  لندن (مانیٹرنگ ڈیسک)برطانیہ میں 60 ہزار ایسے مریضوں کی موجودگی کا انکشاف ہوا ہے جن میں کووڈ 19 کی علامات 3 ماہ سے زیادہ عرصے تک برقرار رہیں۔یہ بات ایک نئی طبی تحقیق میں سامنے آئی اور اس طرح کے مریضوں کو لانگ کووڈ کا شکار قرار دیا۔محققین کے مطابق کچھ افراد میں علامات کی شدت معتدل تھی مگر دیگر میں سنگین حد تک متاثر ہوئے تھے۔تحقیق میں بتایا گیا کہ طویل المعیاد علامات سے متاثرہ کچھ افراد کا کہنا تھا کہ وہ پہلے فٹ اور صحت مند تھے مگر اب وہ وہیل چیئر تک محدود ہوگئے ہیں۔طویل عرصے تک علامات کا شکار رہنے والے افراد نے سانس لینے میں مشکلات اور تھکاوٹ کو رپورٹ کیا جبکہ کچھ کا کہنا تھا کہ خریداری یا سیڑھیاں چڑھنا بھی انہیں کئی روز تک بستر پر رہنے پر مجبور کردیتا ہے۔کنگز کالج لندن کے پروفیسر اسپیکٹر کے مطابق صارفین کا ڈیٹا ایپ سے حاصل کیا گیا جس میں معلوم ہوا کہ 3 لاکھ افراد نے ایک ماہ سے زائد عرصے تک علامات کو رپورٹ کیا اور اسے لانگ کووڈ کا نام دیا گیا ہے۔ان 3 لاکھ میں سے 60 ہزار کو علامات کا سامنا 3 ماہ سے زائد عرصے تک ہوا جبکہ برطانیہ کے ہیلتھ سیکرٹری میٹ ہینکوک نے رواں ہفتے بتایا تھا کہ کچھ افراد کو بیماری کے 6 ماہ بعد اب بھی علامات کا سامنا ہورہا ہے۔انہوں نے بتایا کہ نوجوان افراد بھی کئی ماہ بعد تاحال علامات کا سامنا کررہے ہیں۔

کا انکشاف

مزید :

صفحہ اول -