ہجومِ غم سے یاں تک سرنگونی مجھ کو حاصل ہے

ہجومِ غم سے یاں تک سرنگونی مجھ کو حاصل ہے
ہجومِ غم سے یاں تک سرنگونی مجھ کو حاصل ہے

  

ہجومِ غم سے یاں تک سرنگونی مجھ کو حاصل ہے

کہ تارِ دامن و تارِ نظر میں فرق مشکل ہے

رفوئے زخم سے مطلب، ہے لذت زخمِ سوزن کی

سمجھیو مت کہ پاسِ درد سے دیوانہ غافل ہے

وہ گُل جس گلستاں میں جلوہ فرمائی کرے غالبؔ

چٹکنا غنچہ و گل کا صدائے خندۂ دل ہے

شاعر: راول حسین

Hajoom e Gham Say Yaan Tak Sarnagooni Mujh Ko Haasil Hay

Keh Taar e Daaman o Taar  e Nazar Men Farq Mushkill Hay

Rafway Zakhm Say Matlab Hay Lazzat Zakhm e Sozan Ki

Samjkhio Mat Keh Paas e  Dadr Say Dewaana Ghafil Hay

Wo Gull Jiss Gusitaam Men Jalwa Farmaai Karay GHALIB

Chatakna Guncha o Gull Ka Sadaa e Khanda e Dil Men Hay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -