جس بزم میں تو ناز سے گفتار میں آوے

جس بزم میں تو ناز سے گفتار میں آوے
جس بزم میں تو ناز سے گفتار میں آوے

  

جس بزم میں تو ناز سے گفتار میں آوے

جاں کالبدِ صورتِ دیوار میں آوے

سائے کی طرح ساتھ پھریں سرو و صنوبر

تو اس قدِ دل کش سے جو گلزار میں آوے

تب نازِ گراں مایگیٔ اشک بجا ہے

جب لختِ جگر دیدۂ خوں بار میں آوے

دے مجھ کو شکایت کی اجازت کہ ستم گر

کچھ تجھ کو مزہ بھی مرے آزار میں آوے

اس چشمِ فسوں گر کا اگر پائے اشارہ

طوطی کی طرح آئنہ گفتار میں آوے

کانٹوں کی زباں سوکھ گئی پیاس سے یا رب

اک آبلہ پا وادیِ پر خار میں آوے

مر جاؤں نہ کیوں رشک سے جب وہ تنِ نازک

آغوشِ خمِ حلقۂ زنار میں آوے

غارت گرِ ناموس نہ ہو گر ہوسِ زر

کیوں شاہدِ گل باغ سے بازار میں آوے

تب چاکِ گریباں کا مزہ ہے دلِ نالاں

جب اک نفس الجھا ہوا ہر تار میں آوے

آتش کدہ ہے سینہ مرا رازِ نہاں سے

اے وائے اگر معرضِ اظہار میں آوے

گنجینۂ معنی کا طلسم اس کو سمجھیے

جو لفظ کہ غالبؔ مرے اشعار میں آوے

شاعر: مرزا غالب

Jiss Bazm Men Naaz Say Tu Guftaar Men Aaway

Jaan Ka Lubd e Soorat e Dewaar Men Aaway

Saaey Ki Tarah Saath Phiren Sarve o Sanobar

Tu Iss Qad e Dilash Say Jo Gulzaar Men Aaway

Tab naaz e Garaan maaigi Ashk baja hay

Jab Lakht e Jigar Deeda e Khoonbaar Men Aaway

Day Mujh Ko Shikaayat Ki Ejaazat  Keh Sitamgar

Kuch Tujh Ko Maza BhI Miray Azaar Men Aaway

Uss Chashm e Fasoon Gar Ka Agar Paa e Ishaara

Tooti Ki Tarah Aaina Guftaar Men Aaway

Kaanton Ki Zubaan Sookh Gai Payaas Say Ya RAB

Ik Aabla Paa Waadi e Purkhaar Men Aaway

Mar Na Jaaun Kiun Rashk Say Jab Wo tTan e Naazuk

Aaaghosh e Khum e Halqa e Zunnaar Men Aaway

Ghaarat Gar e Namoos Na Ho Gar Hawas e Zar'

Kiun Shahid e Gull Baagh Say Bazaar Men Aaway

Tab Chaak e Girebaan Ka Maza Hay Dil e Nadaan

Jab Ik Nafas Ujljha Hua Har Taar Men Aaway

Aatish Kada Hay Seena Mira Raaz e Nihaan Say

Ay Waaey Agar Maariz e  Izahaar Men Aaway

Ganjeena e Maani ta Talism Iss KO Samjhiay

Jo Lafz Keh GHALIB Miray Ashaar Men Aaway

Poet: Mizra Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -