حسنِ مہ گرچہ بہ ہنگامِ کمال اچھا ہے

حسنِ مہ گرچہ بہ ہنگامِ کمال اچھا ہے
حسنِ مہ گرچہ بہ ہنگامِ کمال اچھا ہے

  

حسنِ مہ گرچہ بہ ہنگامِ کمال اچھا ہے

اس سے میرا مہِ خورشید جمال اچھا ہے

بوسہ دیتے نہیں اور دل پہ ہے ہر لحظہ نگاہ

جی میں کہتے ہیں کہ مفت آئے تو مال اچھا ہے

اور بازار سے لے آئے اگر ٹوٹ گیا

ساغرِ جم سے مرا جامِ سفال اچھا ہے

بے طلب دیں تو مزہ اس میں سوا ملتا ہے

وہ گدا جس کو نہ ہو خوئے سوال اچھا ہے

ان کے دیکھے سے جو آ جاتی ہے منہ پر رونق

وہ سمجھتے ہیں کہ بیمار کا حال اچھا ہے

دیکھیے پاتے ہیں عشاق بتوں سے کیا فیض

اک برہمن نے کہا ہے کہ یہ سال اچھا ہے

ہم سخن تیشے نے فرہاد کو شیریں سے کیا

جس طرح کا کہ کسی میں ہو کمال اچھا ہے

قطرہ دریا میں جو مل جائے تو دریا ہو جائے

کام اچھا ہے وہ جس کا کہ مآل اچھا ہے

خضر سلطاں کو رکھے خالقِ اکبر سر سبز

شاہ کے باغ میں یہ تازہ نہال اچھا ہے

ہم کو معلوم ہے جنت کی حقیقت لیکن

دل کے خوش رکھنے کو غالبؔ یہ خیال اچھا ہے

شاعر: مرزا غالب

Husn Mah garcheh ba Hangaam kahan Acha Hay

Uss Say Mera Mah Khursheed Jamaal  Acha Hay

Boss Deta  Nahen Aor Dil Pe Hay Har Lehza Nigaah

G Men Kehtay Hen Keh Muft    Aaey To Maal  Acha Hay

Aor Bazaar Say lay Aaey Agar Toot Gaya

Saagahr eJam Say Mira Jaam e Sifaal  Acha Hay

Be Talab Den To Maza Uss Men Siwaa Milta Hay

Wo gadaa Jiss Ko na Ho Khaway Sawaal Acha Hay

Un K Dekhay Say Jo Aa Jaati Hay  Munh Par Ronaq

Wo Samjhtay Hen Keh Bemaar Ka Haal Acha Hay

Dekhioay Paatay Hen Ushaaq Bution Say KayaFaiz

Ik Barehman Nay kaha Hay Keh  Yeh Saal Acha Hay

Ham SukhanTeshay Nay Farhaad Ko Shereen Say Kaya 

Jiss tarah Ka Keh Kisi Men Ho kamaal  Acha Hay

Khiz e Sutaan Ko Rakhay Khaaliq e Akbar Sar Sabz

Shaah K Baagh Men Yeh Taaza Nihaal Acha Hay

Ham KOP Maloom Hay Jannat Ki haqeeqat Lekin 

Dil K  Khush Rakhnay  Ko GHALIB Yeh  Khayaal  Acha Hay

Poet:Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -