شکوے کے نام سے بے مہر خفا ہوتا ہے

شکوے کے نام سے بے مہر خفا ہوتا ہے
شکوے کے نام سے بے مہر خفا ہوتا ہے

  

شکوے کے نام سے بے مہر خفا ہوتا ہے

یہ بھی مت کہہ کہ جو کہیے تو گِلا ہوتا ہے

پُر ہوں میں شکوے سے یوں، راگ سے جیسے باجا

اک ذرا چھیڑیے پھر دیکھیے کیا ہوتا ہے

گو سمجھتا نہیں پر حسنِ تلافی دیکھو

شکوۂ جور سے سر گرمِ جفا ہوتا ہے

عشق کی راہ میں ہے چرخِ مکوکب کی وہ چال

سست رو جیسے کوئی آبلہ پا ہوتا ہے

کیوں نہ ٹھہریں ہدفِ ناوکِ بیداد کہ ہم

آپ اٹھا لاتے ہیں گر تیر خطا ہوتا ہے

خوب تھا پہلے سے ہوتے جو ہم اپنے بد خواہ

کہ بھلا چاہتے ہیں اور برا ہوتا ہے

نالہ جاتا تھا پرے عرش سے میرا اور اب

لب تک آتا ہے جو ایسا ہی رسا ہوتا ہے

خامہ میرا کہ وہ ہے باربُدِ بزمِ سخن

شاہ کی مدح میں یوں نغمہ سرا ہوتا ہے

اے شہنشاہِ کواکب سپہ و مہرِ علم

تیرے اکرام کا حق کس سے ادا ہوتا ہے

سات اقلیم کا حاصل جو فراہم کیجے

تو وہ لشکر کا ترے نعل بہا ہوتا ہے

ہر مہینے میں جو یہ بدر سے ہوتا ہے ہلال

آستاں پر ترے مہ ناصیہ سا ہوتا ہے

میں جو گستاخ ہوں آئینِ غزل خوانی میں

یہ بھی تیرا ہی کرم ذوق فزا ہوتا ہے

رکھیو غالبؔ مجھے اس تلخ نوائی میں معاف

آج کچھ درد مرے دل میں سوا ہوتا ہے

شاعر: مرزا غالب

Shikway k Naam Say Be Mehr Khafa Hota Hay

Ye Bhi Mat kaih Keh Jo Kehtay Hen To Gilaa Hota Hay

Pur Hun Main Shikway Say Yun  Raag Say Jesay Baaja

Ik Zara Chherriay Phir Dekhiay Kaya Hota Hay

Go Samjhta nahen Par Husn e Talaafi Dekho

Shikwa e Jor Say Sargarm  e Jafaa Hota Hay

Eshq Ki Raah Men Hay Charkh Mikokab Ki  Wo Chaal

Sust Rao Jesay Koi Aabla Paa Hota Hay

Kiun Na Thehren Hadaf e Naawak e Bedaad Keh Ham

Aap Utha Laatay Hen  Gar Teer Khataa Hota Hay

Khoob Tha Pehlay Say Hotay Jo Ham Apnay Badkhaah 

Keh Bhala Chaahtay Hen Aor Bura Hota Hay

Naala Jaata Tha Paray Arsh Say Mera Aor Ab

Lab Pe Aata Hay Jo Aisa Hi Rasaa Hota Hay

Ghaama Mera Keh hay Wp baar Bud e Bazm e Sukhan

Shaah Ki madha Men Yun Naghma Saraa Hota Hay

Ay Shahinsha e Kawaakab Sipah o Mehr e Alam

Teray Ikraam Ka Haq Kiss Say Adaa Hiota Hay

Saat Aqleem Ka Haasil Jo Faraaham Kijiay 

To Wo Lashkar  Ka tiray Naal Bahaa Hota Hay

Har Maheenay Men Jo Yeh Badar Say Hota Hay Hilaal

Aastaan Par Tiray Mah Nasiah Saa Hota Hay

maiN jo Gustaakh Hun Aaeen e Ghazal Khaani Men

Yeh Bhi Tera Hi Karam Zoq Fazaa Hota Hay

Rakhio GHALIB Mujhay Iss Talkh Nawaai Men Muaaf

Aaj Kuch Dard Miray Dil Men Siwaa Hota Hay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -