میں انہیں چھیڑوں اور کچھ نہ کہیں

میں انہیں چھیڑوں اور کچھ نہ کہیں
میں انہیں چھیڑوں اور کچھ نہ کہیں

  

میں انہیں چھیڑوں اور کچھ نہ کہیں

چل نکلتے جو مے پیے ہوتے

قہر ہو یا بلا ہو جو کچھ ہو

کاشکے تم مرے لیے ہوتے

میری قسمت میں غم گر اتنا تھا

دل بھی یا رب کئی دیے ہوتے

آ ہی جاتا وہ راہ پر غالبؔ

کوئی دن اور بھی جیے ہوتے

شاعر: مرزا غالب

Main Unhen Chherrun Aor kuch Na Kahen

Chall Nikaltay Jo May Piay Hotay 

Qehr Ho Ya Balaa Ho, Jo Kuch Ho

Kaash Keh Tum Miray Liay Hotay

Meri Qismat Men Gham Ghar Itna Tha

Dil Bhi Ya RAB Kai Diay Hotay

Aa Hi Jaata Wo Raah Par GHALIB

Koi Din Aor Bhi Jiay Hotay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -