غیر لیں محفل میں بوسے جام کے

غیر لیں محفل میں بوسے جام کے
غیر لیں محفل میں بوسے جام کے

  

غیر لیں محفل میں بوسے جام کے

ہم رہیں یوں تشنہ لب پیغام کے

خستگی کا تم سے کیا شکوہ کہ یہ

ہتکھنڈے ہیں چرخ نیلی فام کے

خط لکھیں گے گرچہ مطلب کچھ نہ ہو

ہم تو عاشق ہیں تمہارے نام کے

رات پی زمزم پہ مے اور صبح دم

دھوئے دھبے جامۂ احرام کے

دل کو آنکھوں نے پھنسایا کیا مگر

یہ بھی حلقے ہیں تمہارے دام کے

شاہ کے ہے غسل صحت کی خبر

دیکھیے کب دن پھریں حمام کے

عشق نے غالبؔ نکما کر دیا

ورنہ ہم بھی آدمی تھے کام کے

شاعر: مرز غالب

Ghair Len Mehfill Men Bosay Jaam K

Ham Rahen Yun Tashna Lab Pighaam K 

Khastagi Ka Tum Say Kaya Shikwa Keh Yeh

Hathkannday  Hen Charkh e Neeli Faam K

Khat Likhen Gay Garcheh Matlab Kuch Na Ho

Ham To Aashiq Hen Tumhaaray Naam K

Raat Pee Zam Zam Pe May Aor Subho Dam

Dhooey Dhabbay Jaama e Ehraam K

Dil Ko Aankhon Nay Phansaaya Kia , Magar

Yeh Bhi Halqay Hen Tumhaaray Daam K

Shah K Hay Ghusl e Sehat Ki Khabar

Dikhiay kab Din Phiren Hamaam K

Eshq Nay GHALIB Nikamma Kar  Dia

Warna Ham Bhi Aadmi Thay Kaam K

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -