پھر اس انداز سے بہار آئی

پھر اس انداز سے بہار آئی
پھر اس انداز سے بہار آئی

  

پھر اس انداز سے بہار آئی

کہ ہوئے مہر و مہ تماشائی

دیکھو اے ساکنانِ خطّۂ خاک

اس کو کہتے ہیں عالم آرائی

کہ زمیں ہو گئی ہے سر تا سر

رو کشِ سطحِ چرخِ مینائی

سبزے کو جب کہیں جگہ نہ ملی

بن گیا روۓ آب پر کائی

سبزہ و گل کے دیکھنے کے لیے

چشمِ نرگس کو دی ہے بینائی

ہے ہوا میں شراب کی تاثیر

بادہ نوشی ہے باد پیمائی

کیوں نہ دنیا کو ہو خوشی غالبؔ

شاہِ دیں دار نے شفا پائی

شاعر: مرزا غالب

Phir Iss Andaaz Say Bahaar aai

Keh Huay Mehr o Mah Tamaashaai

Dekho Ay Saknaan e Khitta e Khaak

Iss Ko Kehtay Hen Aalam Aaraai

keh Zameen Ho gai Hay Sar Taa Paa

Dokash e Sath e Charkh e Meenaai

Sabzay Ko Jab Kahen Jagah Na Mili

Ban Gaya Roo e Aab Par  Kaai

Sabza o Gull Ko Dekhnay k Laiy

Chashm e Nargiss Ko Di Hay Benaai

Hay Hawaa Men Sharaan Ki Taseer

Baada Noshi Hay  Baad  Paimaai

Kiun Na Dunya Ko Ho Khushi GHALIB

Shaah e Deen Daar Nay Shifaa Paai

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -