کب وہ سنتا ہے کہانی میری

کب وہ سنتا ہے کہانی میری
کب وہ سنتا ہے کہانی میری

  

کب وہ سنتا ہے کہانی میری

اور پھر وہ بھی زبانی میری

خلشِ غمزۂ خوں ریز نہ پوچھ

دیکھ خوں نابہ فشانی میری

کیا بیاں کر کے مرا روئیں گے یار

مگر آشفتہ بیانی میری

ہوں ز خود رفتۂ بیداۓ خیال

بھول جانا ہے نشانی میری

متقابل ہے مقابل میرا

رک گیا دیکھ روانی میری

قدرِ سنگِ سرِ رہ رکھتا ہوں

سخت ارزاں ہے گرانی میری

گرد بادِ رہِ بیتابی ہوں

صرصرِ شوق ہے بانی میری

دہن اس کا جو نہ معلوم ہوا

کھل گئی ہیچ مدانی میری

کر دیا ضعف نے عاجز غالبؔ

ننگِ پیری ہے جوانی میری

شاعر: مرزا غالب

kab Wo Sunta Hay kahaani Meri

Aor Phir Wo Bhi Zubaani Meri

Khalish e ghaza e Khoon Raiz Na Pooch

Dekh Khoon Nab Fashaani Meri

Kaya Bayaan Kren Mira Roen Gay Yaar

magar Aashufta bayaani Meri

Hun Za Khud Rafta  e Bedaa e Khayaal

Bhool Jaan Hay Nishaani Meri

Mutaqaabil Hay Muqaabil Mera

Ruk Gaya Dekh Rawaani Meri

Qadr e Sang e Sar e Raah Dikhta Hay

Sakht Arzaan Hay  Garaani Meri

Gard  Baad e Rah e Betaabi Hun

Sar Sar e Shoq Hay Baani Meri

Dahan Iss Ka Jo Na Maloom Hua

Khull Gai Heech Madaani Meri

Kar Daya Zoaf  Nay Aajiz GHALIB

Nang e Peeri Hay Jawaani Meri

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -