گلشن کو تری صحبت از بسکہ خوش آئی ہے

گلشن کو تری صحبت از بسکہ خوش آئی ہے
گلشن کو تری صحبت از بسکہ خوش آئی ہے

  

گلشن کو تری صحبت از بسکہ خوش آئی ہے

ہر غنچے کا گل ہونا آغوش کشائی ہے

واں کنگرِ استغنا ہر دم ہے بلندی پر

یاں نالے کو اُور الٹا دعوائے رسائی ہے

از بسکہ سکھاتا ہے غم ضبط کے اندازے

جو داغ نظر آیا اِک چشم نمائی ہے

شاعر: مرزا غالب

  Gulshan Ko Tiri Sohbat Az Bas Keh Nazar Aai Hay

Har  Ghunchay Ka Gul Hona Aaghosh Kushaai Hay

Waan Kungor e Istaghna Har Dam Hay Bulanndi  Par

Yaan Naalay Ko Aor  Ulta Dawaa e Rasaai Hay

Azbass Keh Sikhaata Hay Gham e Zabt K Andaazay

Jo daagh Nazar Aaya Ik Chashm   Numaai Hay

Poet: Miza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -