غم وہ افسانہ کہ آشفتہ بیانی مانگے

غم وہ افسانہ کہ آشفتہ بیانی مانگے
غم وہ افسانہ کہ آشفتہ بیانی مانگے

  

نقشِ نازِ بتِ طناز بہ آغوشِ رقیب

پاۓ طاؤس پئے خامۂ مانی مانگے

تو وہ بد خو کہ تحیّر کو تماشا جانے

غم وہ افسانہ کہ آشفتہ بیانی مانگے

وہ تبِ عشق تمنّا ہے کہ پھر صورتِ شمع

شعلہ تا نبضِ جگر ریشہ دوانی مانگے

شاعر: مرزا غالب

Naqsh e Naaz e Butt e Tannaaz Ba Agosh e Raqeeb

Paa e Taoos Paa e Khaama e Maani Maangay

Tu Wo badkhoo Keh Tahayyar Ko Tamaash Jaanay

Gham Wo AFsaana Keh Aashuft Bayaani Maagay

Wo Tap e Eshq , Tamanna Hay Keh Phir Soorat e Shama

Shola Ta Nabz e Jigar Resha Dawaani Maagay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -