جس زخم کی ہو سکتی ہو تدبیر رفو کی

جس زخم کی ہو سکتی ہو تدبیر رفو کی
جس زخم کی ہو سکتی ہو تدبیر رفو کی

  

جس زخم کی ہو سکتی ہو تدبیر رفو کی

لکھ دیجیو یا رب اسے قسمت میں عدو کی

اچّھا ہے سر انگشتِ حنائی کا تصوّر

دل میں نظر آتی تو ہے اک بوند لہو کی

کیوں ڈرتے ہو عشّاق کی بے حوصلگی سے

یاں تو کوئی سنتا نہیں فریاد کسو کی

اے بے خبراں! میرے لبِ زخمِ جگر پر

بخیہ جسے کہتے ہو شکایت ہے رفو کی

گو زندگئِ زاہدِ بے چارہ عبث ہے

اتنا تو ہے، رہتی تو ہے تدبیر وضو کی

دشنے نے کبھی منہ نہ لگایا ہو جگر کو

خنجر نے کبھی بات نہ پوچھی ہو گلو کی

صد حیف وہ نا کام کہ اک عمر سے غالبؔ

حسرت میں رہے ایک بتِ عربدہ جو کی

شاعر:مرزا غالب

Jiss Zakhm Ki Ho Sakti Ho Tadbeer Rafu Ki

Likh Dijo, Yaa RAB Isay Qismat Men Odu Ki

Acha Hay Sar Angasht e Hinaai ka Tasawwar

Dil Men Nazar Aati To Hay Ik Boond Lahu Ki

Kiun Dartay Ho Ushhaaq Ki Be Hosalgi Say

Yaan To Koi Sunta Nahen Faryaad Kasu Ki

Dashnay Nay kabhi Munh Na Lagaaya Ho Jigar Ko

Khanjar Nay Kabhi Baat Na Poochi Ho Gulu Ki

Sad Haif Wo Nakaam Keh Ik Umr Say GHALIB

Hasrat Men Rahay Aik But e Arbada Ju Ki

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -