ہر قدم دوریِ منزل ہے نمایاں مجھ سے

ہر قدم دوریِ منزل ہے نمایاں مجھ سے
ہر قدم دوریِ منزل ہے نمایاں مجھ سے

  

ہر قدم دوریِ منزل ہے نمایاں مجھ سے

مری رفتار سے بھاگے ہے، بیاباں مجھ سے

درسِ عنوانِ تماشا، بہ تغافلِ خوشتر

ہے نگہ رشتۂ شیرازۂ مژگاں مجھ سے

وحشتِ آتشِ دل سے، شبِ تنہائی میں

صورتِ دُود، رہا سایہ گُریزاں مجھ سے

غمِ عشاق نہ ہو، سادگی آموزِ بُتاں

کِس قدر خانۂ آئینہ ہے ویراں مجھ سے

اثرِ آبلہ سے، جادۂ صحرائے جنوں

صورتِ رشتۂ گوہر ہے چراغاں مجھ سے

بیخودی بسترِ تمہیدِ فراغت ہو جو

پُر ہے سائے کی طرح، میرا شبستاں مجھ سے

شوقِ دیدار میں، گر تو مجھے گردن مارے

ہو نگہ، مثلِ گلِ شمع، پریشاں مجھ سے

بیکسی ہائے شبِ ہجر کی وحشت، ہے ہے!

سایہ خورشیدِ قیامت میں ہے پنہاں مجھ سے

گردشِ ساغرِ صد جلوۂ رنگیں، تجھ سے

آئینہ داریِ یک دیدۂ حیراں، مُجھ سے

نگہِ گرم سے ایک آگ ٹپکتی ہے، اسدؔ!

ہے چراغاں، خس و خاشاکِ گُلستاں مجھ سے

شاعر: مرزا غالب

Har Qadam Doori e Manzill Hay Numayaan Mujh Say

Miri Raftaar Say Bhaagay Hay Bayabaan Mujh Say

Dars e Unwasan e Tamaasha Ba Taghaaful Khoshtar

hay Nigah Rishta e Shiraaza e Mizzgaan Mujh Say

Wehshat Aatish e Dil Say Shab e Tanhaai  Men

Soorat e Dood Raha Saaya e Gurezaan Mujh Say

Ghame Ushhaaq Na Ho Saadgi Aamooz e Butaan

Kiss Qadar Khaana e Aaina Hay Weraan Mujh Say

Asar Aabla Say Jaada e Sehra Ay Junoon

Soorat e Rishta Gohar  Hay Charaghaan Mujh Say

Bekhuddi Basta e Tamheed e Faraaghat Ho Jo

Pur Hay Saaey Ki Tarah Mera Shabistaan Mujh Say

Shoq e Dedaar Men Gar Tu Mujh Ko Gardan Maaray

Ho Nigah Misl e Gull e Shama Pareshaan Mujh Say

Bekasi Haa e Shab e Hijr ki Wehshat Hay Hay

Saaya Khursheed e Qayamat Men Hay Pinhaan Mujh Say

Gardash e Saaghir e Sad Jalwa e Rangeen Tujh Say

Aaina Daari e yak Deeda e hairaan Mujh Say

Nigah Garm Say Ik Aag Tapakti Hay ASAD

Hay Charaghaan , Khas o Khashaak e Gulistaan Mujh Say

Pot: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -