چاک کی خواہش ، اگر وحشت بہ عُریانی کرے

چاک کی خواہش ، اگر وحشت بہ عُریانی کرے
چاک کی خواہش ، اگر وحشت بہ عُریانی کرے

  

چاک کی خواہش ، اگر وحشت بہ عُریانی کرے

صبح کے مانند ، زخمِ دل گریبانی کرے

جلوے کا تیرے وہ عالم ہے کہ ، گر کیجے خیال

دیدۂ دل کو زیارت گاہِ حیرانی کرے

ہے شکستن سے بھی دلِ نومید ، یارب ! کب تلک

آبگینہ کوہ پر عرضِ گِرانجانی کرے

میکدہ گر چشمِ مستِ ناز سے پاوے شکست

موئے شیشہ دیدۂ ساغر کی مژگانی کرے

خطِّ عارض سے ، لکھا ہے زُلف کو الفت نے عہد

یک قلم منظور ہے ، جو کچھ پریشانی کرے

شاعر: مرزا غالب

Chaak Ki Khaahish Agar Wehshat Ki Uryaani Karay

Subh Ki Maanind Zakhm e Dil Girebaani Karay

Jalway Ka Teray Wo Aalam Hay Keh Gar Kijay Khayaal

Deeda e Dil Ko Zayaarat Gaah e Hairaani Karay

Hay Shikaastan Say Bhi Dil Naomeed Ya RAB ,kab Talak

Aabgeena Koh Par Arz e Giraanjaani Karay

maikadaa gar Chashm e naaz Say Paaway Shikast

Moo e Sheesha Deeda e Saaghar Ki  Mizzgaani Karay

Khat e Aariz Say Likh Hay Zulf Ko Ulfat Nay Ehd

Yak Qalam  Manzoor Hay Jo Kuch Pareshaani Karay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -