عمارتوں میں فائر پروف سسٹم کی تنصیب لازمی قرار دے دی گئی

عمارتوں میں فائر پروف سسٹم کی تنصیب لازمی قرار دے دی گئی
عمارتوں میں فائر پروف سسٹم کی تنصیب لازمی قرار دے دی گئی

  


لاہور/عامر بٹ سے

انسانی جانوں کو تحفظ فراہم کرنے کی غرض سے ڈی جی ایل ڈی اے کی ہدایت پر سرکاری و غیر سرکاری عمارتوں میں فائر پروف سسٹم کی تنصیب لازمی قرار دے دی گئی صوبائی دارالحکومت میں تعمیر شدہ عمارتوں میں حادثاتی اور ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لیے ایسکو اہلکاروں کے لیے ایمرجنسی روم بنائیں جائیں گے جہاں تربیت یافتہ سٹاف بیٹھے گا جبکہ صوبائی دارالحکومت میں سیفٹی پلان کے مطابق عمل درآمد کی صورت میں ہی نئی عمارتوں کو ایل ڈی اے این او سی جاری کرے گا روزنامہ پاکستان کو ملنے والی معلومات کے مطابق لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے ڈی جی ایل ڈی اے احد خان چیمہ انسانی جانوں کو تحفظ فراہم کرنے کی غرض سے تیار کیے جانے والے( فائر پروف سسٹم ) پلان پر عمل درآمد کرنے کے لیے سرگرم ہو گئے اور اس ضمن میں لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی کی جانب صوبائی دارالحکومت میں واقع تمام کثیر المنزلہ نجی و سرکاری عمارتوں کے مالکان کو80 روز کے اندر اندر فائر پروف سسٹم پلان پر عمل درآمد کرنے کی ہدایت کی گئی اور تحریری طور پر نوٹسز بھی جاری کیے گئے اور ان تحریری نوٹسز کے ذریعے ان کی توجہ ایل ڈی اے پلاننگ اینڈ زوننگ ریگولیشنز 2008 کی دفعات6.4 اور6.5 کی طرف مبذول کرواتے ہوئے انہیں ہدایت کی گئی کہ عمارتوں میں رہنے والے یا وہاں کام کاج کے لیے آنے والے لوگوں اور عوام الناس کے مفاد میں ان دفعات پر عمل درآمد یقینی بنائیں اور عمارتوں کو کسی بھی حادثاتی اور ہنگامی صورتحال سے بچاؤ کے لیے کسی ماہر کنسلٹنٹ سے عمارت کا مکمل جامع سروے کروانے کی بھی تاکید کی اور اس حوالے سے مزید آگاہی دی گئی کہ عمارت میں بجلی کی وائیرنگ کی کیفیت کا خاص خیال رکھا جائے الیکٹرک ورک کی اچھی کمپنی کی تار لگائی جائے تاکہ شارٹ سرکٹ نہ ہو سکے ہیوی لوڈر استعمال کے لیے پاور پلگ لگائے جائیں اس کے علاوہ آگ سے بچنے اور اس پر قابو پانے کے تمام تر انتظامات کیے جائیں گے جس میں انڈر گراؤنڈ پانی ٹینک کے پائپ آسان استعمال کیے جانے کی پریکٹس کو عام کرنا اس کے علاوہ تمام عمارتوں میں ایمرجنسی الارم بنانے کی بھی خصوصی ہدایت کی گئی جس میں ایسکو کا تربیت یافتہ سٹاف ہر وقت بیٹھے گا جو کہ کسی بھی ایمرجنسی کی صورت میں عوام الناس کے لیے مدد گار ثابت ہو گا اور ہر سال باقاعدہ اس حوالے سے عمارتوں میں ٹریننگ سیکشن بھی ہوں گے اس کے علاوہ سول ڈیفنس کے اہلکار عمارتوں کا جامع سروے کریں گے اور عمارتوں کی سیفٹی کے حوالے سے تفصیلی تصاویری رپورٹ مرتب کریں گے اس کے علاوہ اب یہ بھی طے پایا ہے کہ صوبائی دارالحکومت میں نئی عمارتوں کو تب تک این او سی کے سرٹیفکیٹ نہیں جاری کیے جائیں گے جب تک ریسکو سٹاف اور سول ڈیفنس اہلکاروں کے سروے کے بعد کلیرنس رپورٹ دی جائے گی تو این او سی جاری کیا جائے گا اس ضمن میں ڈائریکٹر ٹاؤن پلاننگ چوہدری اکرم نے مزید آگاہی دی ہے کہ ایل ڈی اے کی جانب سے بھیجے گئے نوٹسز کے بعد متعدد عمارتوں کے مالکان نے حفاظتی اقدامات کے پیش نظر اپنی عمارتوں کے مالکان نے حفاظتی اقدامات کے پیش نظر اپنی عمارتوں کے سرٹیفکیٹ بھجوائے ہیں چوں کہ شاہ عالم جہاں کے خستہ حال عمارتیں ہیں اور وہ ایل ڈی اے کی حدود میں نہ ہیں وہاں کی رپورٹس نہیں آ رہی ہیں تاہم ان عمارتوں میں آئندہ چند روز بعد ریسکیو اور سول ڈیفنس کا سٹاف اپنی حفاظتی تدبیر لاگو کرے گا زندہ دلان شہر لاہور کے لیے پہلی مرتبہ یہ فائر پروف سیفٹی پلان مرتب کیا گیا ہے جس میں عوام الناس کی جانوں کو تحفظ فراہم کرنے کو اولین ترجیح دی گئی جو کہ موجودہ ڈی جی ایل ڈی اے احد خان چیمہ کی ہدایت پر کی گئی ہے

مزید : رئیل سٹیٹ


loading...