سی اینڈڈبلیونے ایک ارب 31کروڑ روپے کی ریکوری کے لیے نیب سے رجوع کرلیا

سی اینڈڈبلیونے ایک ارب 31کروڑ روپے کی ریکوری کے لیے نیب سے رجوع کرلیا
سی اینڈڈبلیونے ایک ارب 31کروڑ روپے کی ریکوری کے لیے نیب سے رجوع کرلیا

  


لاہور(شہباز اکمل جندران//انویسٹی گیشن سیل) محکمہ مواصلات و تعمیرات نے ہاتھ کھڑے کردیئے۔قومی احتساب بیورو سڑکوں کی تعمیر کے سرکاری منصوبے ادھورے چھوڑنے اور ملکی خزانے کو نقصان پہنچانے والے بااثر ٹھیکیداروں سے ریکوری کریگا۔ سی اینڈڈبلیو نے 23 ٹھیکیدار وں سے ایک ارب 31کروڑ روپے کی ریکوری کے لیے احتساب بیور و سے رجوع کرلیا ۔معلوم ہواہے کہ محکمہ مواصلات و تعمیرات بااثر ٹھیکیداروں کے سامنے بے بس ہوگیا ہے۔اور محکمے نے لاہور ، گوجرانوالہ ، سرگودھا، فیصل آباد ،ملتان ، ڈی جی خان اور بہاولپور سرکل میں سرکاری سطح پر سٹرکوں کی تعمیر کے منصوبے ادھورے چھوڑ کر بھاگنے اور ملکی خزانے کو ایک ارب 31کروڑ روپے سے زائد نقصان پہنچانے والے23ٹھیکیداروں کی تفصیلات قومی احتساب بیورو کو ارسال کرد ی ہیں۔جن ٹھیکیداروں اور منصوبوں کی تفصیلات نیب کو فراہم کی گئی ہیں۔ ان میں ھائی ویز سرکل لاہور کے منصوبے لاہور ، قصور روڈکی نامکمل تعمیر کے عوض حسنین کوٹیکس کے ذمے8کروڑ10لاکھ روپے۔لاہور جڑانوالہ روڈ کی نامکمل تعمیر کے عوض حسن زمان لمیٹیڈ کے ذمے 50لاکھ روپے، واجب الادا ہیں۔ اسی طرح ھائی ویز سرکل گوجرانوالہ کے منصوبے سیالکوٹ ،وزیر آباد، رسول نگر، کوٹ ہرا، جلالپور بھٹیاں روڈ کی نامکمل تعمیر کے عوض گجرات کے کاشف عمر ایسوسی ایٹس کے ذمے 3کروڑ 40لاکھ روپے۔بجلی محلہ حافظ آباد میں ریلوے انڈر پاس کی نامکمل تعمیر کے عوض لاہور کے ندیم انجنئیرنگ کے ذمے 40لاکھ روپے۔خانقاہ

ڈوگراں انٹرچینج سے حافظ آباد روڈ کی نامکمل تعمیر کے عوض حسن زمان لیمیٹیڈ کے ذمے 36لاکھ روپے۔بھڑی شاہ رحمن سے نوکر تک سٹرک کی نامکمل تعمیر کے عوض حماد اللہ کے ذمے محض 64ہزار روپے ۔سیدپور پتن پر پل کی تعمیر نامکمل چھوڑنے پر ٹارمک پاک کے ذمے 15لاکھ روپے۔سبلائم چوک سیالکوٹ سے وزیر آباد روڈ کی نامکمل تعمیر کے عوض حسنین کوٹیکس کے ذمے 12کروڑ81لاکھ روپے،سیالکوٹ ، پسرور روڈ کی نامکمل تعمیر کے عوض علیم خان اینڈ سنز کے عوض 8لاکھ روپے واجب الاد ا ہیں۔ ھائی ویز سرکل سرگودھا کے منصوبے خوشاب میانوالی روڈکی نامکمل تعمیر کے عوض رائل کنسٹرکشن کمپنی کے عوض 70لاکھ روپے۔چکوال ڈسٹرکٹ باؤنڈری سے میانوالی کی نامکمل تعمیر کے عوض ہدایت اللہ خان اینڈ کمپنی کے ذمے 54کروڑ 26لاکھ روپے ۔ اسی سٹرک کی تعمیر کے ایک دوسرے گروپ کی نامکمل تعمیر کے عوض عزیز اللہ اینڈ کمپنی کے ذمے، 13کروڑ 49لاکھ روپے ۔ لاہور ،جڑانوالہ، فیصل آباد، جھنگ ، بھکر ،دریا خان روڈ کی نامکمل تعمیر کے عوض ہدایت اللہ اینڈ کمپنی کے ذمے 9کروڑ 60لاکھ روپے۔اسی سٹرک کی تعمیر کے لیے ایک دوسرے گروپ عزیز اللہ اینڈ کمپنی کے ذمے 53کروڑ 77لاکھ روپے واجب لادا ہیں۔ھائی ویز سرکل فیصل آباد کے منصوبے لاہور، جڑانوالہ ، فیصل آباد، جھنگ ، بھکر روڈ کی نامکمل تعمیر کے عوض حسنین کوٹیکس کے ذمے 19کروڑ 33لاکھ روپے۔شاہ کوٹ تا چک جھمرہ روڈ کی نامکمل تعمیر کے عوض اے ایم کنسٹرکشن کمپنی کے ذمے 2کروڑ 20 لاکھ روپے۔گوجرہ سے ٹوبہ ٹیک سنکھ روڈ کی تعمیر کے نامکمل منصوبے کے عوض اے ایم کنسٹرکشن کمپنی کے ذمے 2کروڑ16لاکھ روپے واجب الادا ہیں۔ھائی ویز سرکل ملتان کے منصوبے شیر شاہ روڈ کی نامکمل تعمیر کے عوض حسنی کوٹیکس کے ذمے 7کروڑ 12لاکھ روپے واجب الاد اہیں ۔ اسی طرح ھائی ویز سرکل ڈی جی خان کے منصوبے ایم ایم روڈ سیکشن چوک سرور شہید تا ٹی پی لنک کینال تا مظفر گڑھ گروپ ون کی نامکمل تعمیر کے عوض ہدایت اللہ خان اینڈ کمپنی کے ذمے 42کروڑ96لاکھ روپے واجب الادا ہیں۔ جبکہ ھائی ویز سرکل بہاولپور کے منصوبے گلبرک روڈ تا ریلوے روڈ کی نامکمل تعمیر کے عوض عبدالروف نامی کمپنی کے ذمے 79لاکھ روپے واجب الاد ا ہیں۔ قوا عد وضوابط کے مطابق ٹھیکیدار کی طرف سے سرکاری منصوبہ ادھورا چھوڑ کر جانے کی صورت اس کی سیکیورٹی کی رقم سے باقی کام کروایا جاتا ہے۔ لیکن متذکرہ منصوبہ جات میں یا تو سیکیورٹی کی رقوم دستیاب ہیں نہیں تھیں یا پھر انہتائی ناکافی تھیں کہ منصوبہ پایا تکمیل تک نہیں پہنچتا تھا۔

مزید : جرم و انصاف


loading...