کاشت میں اضافے کیلئے فاطمہ فرٹیلائزر کا حکومت کے ساتھ اشتراک

کاشت میں اضافے کیلئے فاطمہ فرٹیلائزر کا حکومت کے ساتھ اشتراک

کراچی (پ ر)پاکستان کے کاشتکار ستر سال سے زائد عرصے سے اپنے خون پسینے کی محنت سے قوم کی غذائی ضرورتوں کو پورا کررہے ہیں ۔اگرچہ زراعت کے شعبے کے لیے ہمیشہ زبانی طور پر یہ کہا جاتا ہے کہ یہ شعبہ پاکستان کی ریڑ کی ہڈی ہے لیکن ان کاشتکاروں کو عملی طور پر بہت کم ہی نوازا گیا ہے ۔فاطمہ فرٹیلائزر کمپنی لمیٹڈ نے ان ہی وجوہات کی بنا پر پاکستان میں فاطمہ گروپ اور عارف حبیب کے اشتراک سے اپنے کام کا آغاز کیا ۔کمپنی نے’’ سرسبز‘‘ کے نام سے فرٹیلائزر کا ایک وسیع انتخاب متعارف کرواکے جو پاکستان کی مٹی کے لیے نہایت موزوں ہے کاشتکار کی فی ایکٹر کاشت کو بڑھانے اور ان کی کھادوں پر آنے والی لاگت معہ منافع دلوانے کے لیے عملی اقدامات کیے ۔اپنی مصنوعات پر مضبوط گرفت ہونے کی وجہ سے فاطمہ فرٹیلائزر کھاد کی صنعت سے آگے بڑھ کر شعبہ زراع کے مسائل کا حل پیش کرنے والی کمپنی بن کر ابھری ہے ۔اس سلسلے میں پاکستان میں منعقدہ ایگری ٹیک ایکسپو 2018میں ڈجیلاٹزیشن آف ایگری کلچر کمپنی نے حکومت پنجاب کے ساتھ ایک اشتراکی سمجھوتے کی بنیاد رکھی ۔یہ اشتراکی سمجھوتہ دو کلیدی اقدامات کا احاطہ کرتا ہے جو حکومت پنجاب فاطمہ فرٹیلائزر کے تعاون سے کررہی ہے ایک یہ کہ کاشتکار کے لیے زراعت کے ضمن میں معلومات و ابلاغ کی ٹیکنالوجی کی ترقی و فروغ اور دوسرے یہ کہ پورے صوبے میں فارم میکینائزیشن سینٹرز کا قیام ہے ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر