پنجاب میں رواں برس 6-1ملین ایکڑ رقبہ پر کپاس کاشت کی گئی

پنجاب میں رواں برس 6-1ملین ایکڑ رقبہ پر کپاس کاشت کی گئی

  



راولپنڈی(اے پی پی ) نظامت زرعی اطلاعات پنجاب کے ترجمان نے کہا ہے کہ حالیہ بارشوں اور سیلاب سے صوبہ پنجاب کے بعض علاقوں میں فصلوں کو نقصان پہنچا ہے۔ خاص طور پر جنوبی پنجاب کے چند اضلاع سیلاب سے متاثر ہوئے ہیں جہاں کپاس کی فصل کو زیادہ نقصان کا احتمال ہو سکتا ہے۔ ترجمان کے مطابق صوبہ پنجاب میں 2015-16 میں 6.1 ملین ایکڑ رقبہ پر کپاس کی کاشت کی گئی جس سے قریباً 10.5 ملین گانٹھ کپاس حاصل ہونے کی توقع ہے۔ محکمہ زراعت پنجاب کا عملہ سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں کپاس اور دیگر فصلوں کو نقصان سے محفوظ کرنے کے لئے کاشتکاروں کے ساتھ رابطہ میں ہے اور ان کی ہر ممکن مدد کی جا رہی ہے۔ ترجمان کے مطابق حالیہ مون سون بارشوں سے جن کھیتوں میں پانی زیادہ کھڑا ہو جائے وہاں اس کے نکاس کا بروقت انتظام کریں۔ بارشوں وجہ سے فصل کی بڑھوتری زیادہ ہو رہی ہو تو میپی کواٹ کلورائیڈ بحساب 140 ملی لٹر فی ایکڑ تین مرتبہ 10 دن کے وقفہ سے سپرے کریں۔ اگر کپاس پر بارشوں کی وجہ سے سفید مکھی، سبز تیلہ، تھرپس اور ملی بگ کا حملہ بڑھ رہا ہو اور ان کا حملہ نقصان کی معاشی حد تک ہو تو محکمہ زراعت (توسیع و پیسٹ وارننگ) کے مقامی عملہ کے مشورہ سے زہروں کا سپرے کریں۔ ترجمان کے مطابق حکومت بارشوں اور سیلاب کے نقصانات کو مستقل بنیادوں پر کم کرنے کے لئے منصوبہ بندی کر رہی ہے کیونکہ موسمی حالات اور آب و ہوا میں تبدیلی کی وجہ سے یہ مسئلہ زیادہ توجہ کا متقاضی ہے۔ حکومت کی کوشش ہے کہ آئندہ برسوں میں نہ صرف سیلاب سے بچا جا سکے بلکہ فصلوں کو آبپاشی کے لئے پانی کی کمی بھی نہ آنے دی جائے تاکہ بھرپور پیداوار حاصل کی جا سکے۔ اس مقصد کے لئے پانی ذخیرہ کرنے کے منصوبوں پر توجہ دی جا رہی ہے اور دستیاب پانی کے باکفایت استعمال کے طریقوں کے بارے میں بھی کاشتکاروں کو آگاہ کیا جا رہا ہے جس سے یقیناًمثبت نتائج برآمد ہوں گے۔

مزید : کامرس