ملی مجلس شرعی کا اجلاس ،ممتازقادری کے خلاف متوقع فیصلے کے خلافتحفظات کا اظہار

ملی مجلس شرعی کا اجلاس ،ممتازقادری کے خلاف متوقع فیصلے کے خلافتحفظات کا ...

  



لاہور(خبر نگار)ملی مجلس شرعی کا اہم اجلاس ممتازقادری کے خلاف عدالتوں طرف سے آنے والے متوقع فیصلے کے خلاف تحفظات کا اظہار،اگر ممتاز قادری کے خلاف فیصلہ آیا تو اسے شریعت کے خلاف فیصلہ تصور کیا جائے گا، اس صورت میں حالات کی ذمہ داری بھی حکمرانوں پر عائد ہوگی۔ملی مجلس شرعی کا اہم اجلاس گذشتہ روز علامہ اقبال ٹاؤن نیلم بلاک میں ہوا جس کی صدارت مفتی محمد خان قادری نے کی،اجلاس میں20سے زائد جماعتوں نے شرکت کی ،جس میں جماعت اسلامی کے ڈاکٹر فرید احمد پراچہ،ڈاکٹر پروفیسر محمد امین،مرکزی جماعت اہلسنت کے علامہ عرفاان مشہدی،جے یو آئی(ف) کے مولانا امجد خان، (س)کے مولانا عبدالرب امجد ،مولانا امیر حمزہ،جامعۃ المنتظر کے علامہ نیاز نقوی،قاری خلیل الرحمن قادری ، مولانا راغب حسین نعیمی ،علامہ بابر فاروق رحیمی،ڈاکٹر میاں محمد اجمل قادری، مولانا شکیل الرحمن ناصر،تنظیم اسلام کے حافظ عاکف سعید،علامہ احمد علی قصوری ، سمیت دیگر نے شرکت کی۔ علماء نے اپنے متفقہ لائحہ عمل میں کہا کہ عدالتوں کی طرف اگرممتاز قادری کے خلاف کوئی فیصلہ آیا تو اسے خلاف شریعت سمجھا جائے گا اور اس فیصلے خلاف خلاف ملک بھر میں احتجاج تحریک چلائی جائے گی،انہوں نے کہا کہ گستاخ رسول ﷺ کی شرعی سزا موت ہے ۔ اور295Cکی طرح عالمی سطح پر قانون سازی کی ضرورت ہے۔ پاکستان اسلام کا قلعہ ہے اور حرمت رسول ﷺکے مسئلے پر مسلمان حکمرانوں کو قائدانہ کردار ادا کر نا چاہیے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1