دورہ میانمار سے مایوسی ہوئی، روہنگیا مسلمانوں سے ملاقات پر پابندی لگائی گئی: سفیر اقوام متحدہ

دورہ میانمار سے مایوسی ہوئی، روہنگیا مسلمانوں سے ملاقات پر پابندی لگائی گئی: ...

  



نیویارک(آئی این پی )اقوام متحدہ کی سفیر برائے انسانی حقوق ینگہی لی نے میانمار کے دورے کو مایوس کن قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ ان پر میانمار کے روہنگیا مسلمانوں سے ملاقات کی پابندی لگائی گی جبکہ سینئر حکام سے ملاقات کو آخری لمحات میں منسوخ کردیا گیا۔غیر ملکی میڈیا کے مطابق ینگہی لی کا کہنا ہے کہ جب وہ حکومتی ناقدین سے ملاقات کے لیے گئی تو وہاں موجود سیکیورٹی حکام خفیہ طریقے سے ان کی تصاویر بناتے رہے۔اقوام متحدہ کی سفیر برائے انسانی حقوق ینگہی لی رواں برس نومبر میں ہونے والے انتخابات سے قبل انسانی حقوق کی صورت حال کا جائزہ لینے کے لیے دورے پر ہیں۔ان کا کہنا ہے کہ ’پروگرام کے مطابق لوگوں تک رسائی میں سنگین رکاوٹ کی وجہ سے ان کے مینڈیٹ کو پورا کرنا ناممکن بنا دیا گیا'۔خیال رہے کہ ایک سال قبل اقوام متحدہ کی جانب سے انسانی حقوق کی خصوصی سفیر منتخب ہونے کے بعد میانمار میں یہ ان کا تیسرا دورہ تھا۔ان کا کہنا تھا کہ ہر دورے میں ان کے چلینجز میں اضافہ ہوا اور خاص طور پر حساس معاملات ، جن میں ملک کی 13 لاکھ روہنگیا مسلمانوں کے ساتھ کیا جانے والا برتاؤ، اہم تھا۔یاد رہے کہ 2012ء میں مشتعل ہجوم کے حملوں نے ڈھائی لاکھ روہنگیا مسلمانوں کو کشتیوں کے ذریعے اور کیمپس کی جانب بے دخل ہونے پر مجبور کیا گیا، جہاں ان کو صحت اور تعلیم کے حوالے سے سہولیات کے فقدان کا سامنا تھا جبکہ ان کو آزادی سے نقل و حمل کی اجازت بھی نہ تھی۔

مزید : عالمی منظر


loading...