یہ تصویر یمن یا شام کی نہیں بلکہ سعودی عرب کی ہے، اس علاقے کی یہ حالت کیسے ہوگئی؟ حقیقت ایسی کہ پوری دنیا میں ہنگامہ برپاہوگیاکیونکہ۔۔۔

یہ تصویر یمن یا شام کی نہیں بلکہ سعودی عرب کی ہے، اس علاقے کی یہ حالت کیسے ...
یہ تصویر یمن یا شام کی نہیں بلکہ سعودی عرب کی ہے، اس علاقے کی یہ حالت کیسے ہوگئی؟ حقیقت ایسی کہ پوری دنیا میں ہنگامہ برپاہوگیاکیونکہ۔۔۔

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

ریاض (مانیٹرنگ ڈیسک) تباہی و بربادی کی تصاویر یمن اور شام سے تو سامنے آتی تھیں لیکن حال ہی میں ایک سعودی شہر کی ایسی تصاویر سامنے آ گئی ہیں کہ اس کی حالت دیکھ کر دنیا دنگ رہ گئی ہے۔یہ مشرقی صوبے عوامیہ کا المسارا ڈسٹرکٹ ہے جسے مسمار کرنے کا سلسلہ کئی روز سے جاری ہے۔ تازہ ترین تصاویر دیکھ کر گمان گزرتا ہے کہ گویا یہ شام کا تباہ شدہ شہر الیپو ہے۔

مڈل ایسٹ آئی کی رپورٹ کے مطابق اس شہر کا محاصرہ تقریباً ایک ماہ سے جاری ہے اور گزشتہ چند دنوں کے دوران 12 سے زائد افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔ سیٹلائٹ تصاویر سے انکشاف ہوا ہے کہ شہر کے ایک بڑے حصے اور خصوصاً المسارا ڈسٹرکٹ کو مسمار کرنے کا سلسلہ جاری ہے۔ صوبہ قطیف سے تعلق رکھنے والے ذرائع کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ الرامس کے علاقے میں اعلانات کئے جا رہے ہیں جن میں کہا جارہا تھا کہ لوگ اپنے جانوروں کو لے کر اس علاقے سے باہر چلے جائیں۔ الشویکا کے علاقے میں، جو کہ المسارا سے چھ کلومیٹر کی دوری پر واقع ہے، گھروں کے باہر نوٹس بھی چسپاں کئے گئے ہیں جن میں گھر خالی کرنے کو کہا گیا ہے۔

ایک خاندان جس پر سعودی عرب نے قیامت ڈھادی، ایک ہی پل میں پورا خاندان مار ڈالا کیونکہ۔۔۔

المسارا کو مسمار کرکے اس کی تعمیر نو کرنے کا منصوبہ سامنے آنے کے بعد سے تنازعہ شدت اختیار کرگیا ہے۔ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ سکیورٹی اہلکار ان کے گھروں پر فائرنگ کرتے ہیں جس کا مقصد انہیں خوفزدہ کرکے العوامیہ چھوڑنے پر مجبور کرنا ہے۔ شہر کے زیادہ تر حصے میں بجلی بھی بند ہے جبکہ گیس اور پانی جیسی سہولیات بھی دستیاب نہیں ہے۔ لوگوں کی ایک بڑی تعداد شہر کو پہلے ہی چھوڑ کر جاچکی ہے۔

مزید : عرب دنیا