حوثیوں نے صنعاء کے اسپتال سے مریض زبردستی باہر نکال دیئے

حوثیوں نے صنعاء کے اسپتال سے مریض زبردستی باہر نکال دیئے

صنعاء(این این آئی)حوثی باغیوں کی جانب سے یمنی شہریوں کے خلاف انتقامی کارروائیوں کا سلسلہ جاری ہے۔ میڈیارپورٹس کے مطابق دارالحکومت صنعاء میں قائم ایک ملٹری اسپتال میں زیرعلاج دسیوں مریضوں کو حوثیوں نے بندوق کی نوک پر باہر نکال دیا۔عرب ٹی وی کے مطابق صنعاء سے ملنے والی اطلاعات کے مطابق دارالحکومت میں قائم ملٹری اسپتال پر باغیوں کا قبضہ ہے اور انہوں نے دو روز قبل اسپتال کے ’یورالوجی‘ شعبے میں زیرعلاج دسیوں مریضوں کو وہاں سے نکال دیا۔ادھر دوسری جانب اسپتال کے طبی عملے نے حوثیوں کی مسلسل مداخلت کے خلاف شدید احتجاج کرتے ہوئے دھمکی دی ہے کہ اگر باغیوں می مداخلت جاری رہی تو وہ ملازمت چھوڑ دیں گے۔ڈاکٹروں اور نرسوں کی طرف سے کہا گیا ہے کہ حوثی باغی مسلسل اسپتال کے انتظامی امور میں مداخلت کے مرتکب ہو رہے ہیں۔ اسپتال کی انتظامیہ اور ڈاکٹروں کو باغیوں کی مداخلت کسی صورت میں قبول نہیں۔ اگر مداخلت کا سلسلہ جاری رہتا ہے تو وہ کام چھوڑنے پرمجبور ہوں گے۔

ادھر اسپتال کے یورالوجی ڈیپارٹمنٹ کے ذمہ داران نے کہا ہے کہ مسلح حوثی باغیوں نے اسپتال پر دھاوا بولا اور اس ڈیپارٹمنٹ میں زیرعلاج دسیوں مریضوں کو زبردستی باہر نکال دیا۔ ان کا کہنا ہے کہ اسپتال سے زبرستی نکالے گئے مریضوں میں کئی کی حالت تشویشناک تھی۔ باغیوں نے نہ صرف اسپتال سے مریضوں کو نکال باہر کیا بلکہ ڈیپارٹمنٹ پربھی قبضہ کرلیا۔خیال رہے کہ یمن میں باغیوں کی جانب سے اسپتالوں اور دیگر سرکاری اداروں میں مداخلت کی شکایت عام ہے۔ باغیوں کی جانب سے اپنے زیرتسلط علاقوں میں اسپتالوں میں مرضی کے لوگ تعینات کرنے کے ساتھ مریضوں کو علاج سیمحروم کرنے کی انتقامی کارروائیاں بھی جاری رکھی ہوئی ہیں۔ اسپتالوں میں رقوم کی لوٹ مار کے ساتھ ساتھ عالمی اداروں کی طرف سے ملنے والی ادویات کو بھی بلیک مارکیٹ میں فروخت کرکے ان سے حاصل ہونے والی رقوم کو دہشت گردی کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔

مزید : عالمی منظر