سبسڈی نہ ملنے پر ملزمالکان کیجانب سے چینی کی سپلائی تاحال بند

سبسڈی نہ ملنے پر ملزمالکان کیجانب سے چینی کی سپلائی تاحال بند

ملتان(جنرل رپورٹر)سبسڈی نہ ملنے پر شوگر ملز مالکان کی جانب سے چینی کی سپلائی مقامی مارکیٹ میں تاحال بند ہونے سے صارفین کو پریشانی کا سامنا ہے ۔چینی کی سپلائی بند ہونے (بقیہ نمبر27صفحہ12پر )

سے دکاندار من مرضی کے نرخ وصول کررہے ہیں ۔ذرائع کے مطابق عالمی مارکیٹ میں چینی کی قیمت مزید کم ہوئی ہے اس لیے ملرز چینی کی برآمد پر حکومت سے سبسڈی مانگ رہے ہیں۔دوسری جانب سپلائی روک کر ملرز مقامی قیمت کو بڑھا رہے ہیں۔غلہ منڈی میں چینی کی سپلائی صرف گوداموں سے ہورہی ہے، اگرچہ ملوں میں چینی کے وافر ذخائر موجود ہیں جو ملکی ضرورت سے کہیں زیادہ ہے اس لیے حکومت نے تین لاکھ ٹن چینی برآمد کرنے کی اجازت دی ہے لیکن ابھی تک اس کا نوٹی فیکشن جاری نہیں کیا۔دوسری جانب چینی کی قیمت شہریوں کے منہ کا ذائقہ کڑوا کرنے لگی 100کلو کا تھیلا 100روپے سستا ہونے کے باوجود مارکیٹ میں سپلائی نہ ہونے کے برابر ہے ۔قیمت5600روپے ہوگئی ہے شوگر ملز مالکان نے اوپن مارکیٹ اور غلہ منڈی میں چینی کی سپلائی روک دی ہے جس کی وجہ سے چینی کی قیمت میں دن بدن اتار چڑہاؤ ہو رہا ہ اور پرچون ریٹ میں چینی 66 روپے فی کلو گرام تک پہنچ گئی ہے صدر کریانہ مرچنٹ ایسوسی ایشن آفاق انصاری کا کہنا ہے کہ شوگر ملز نے چینی کی سپلائی بحال نہ کی تو قیمتیں مزید بڑھنے کا خدشہ ہے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر