بزرگوں نے پاکستان کیلئے بڑی قربانیاں دیں مگر ہم آزادی کی قدر بھول گئے، محمد شریف

بزرگوں نے پاکستان کیلئے بڑی قربانیاں دیں مگر ہم آزادی کی قدر بھول گئے، محمد ...

ملتان (نیوز رپورٹر) قدرت کی جانب سے عطاکردہ نعمتوں میں سے آزادی سب سے اہم نعمت ہے اور اس کی قدر وہی کرسکتے ہیں جنہوں نے آزادی کے حصول کیلئے جدوجہد کرتے ہوئے نفرتوں کے دریا عبور کئے ہوں۔ ان خیالات کا اظہار قیام پاکستان کے بعد بھارت کے ضلع جالندھر سے ہجرت کرکے ملتان آنیوالے محمد شریف نے پاکستان سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے بتایا کہ تحریک پاکستان کا آغاز ہوا تو بھارت میں (بقیہ نمبر30صفحہ12پر )

مسلمانوں کے دلوں میں آزادی کی ایسی لو جلی کہ جس کی روشنی نے قیام پاکستان تک مسلمانوں کے دلوں کو روشن کئے رکھا۔ انہوں نے کہا کہ 14اگست 1947ء کو پاکستان بننے کا اعلان ہوا تو ہمارے پڑوس میں آباد سکھوں نے مسلمانوں کیلئے زمین تنگ کرکے رکھ دی اور قتل و غارت کا وہ سلسلہ شروع ہوا کہ جو رکنے کا نام نہیں لے رہا تھا۔ ہمارے گاؤں میں مسلمان آبادی نے قریبی گاؤں میں پناہ لی‘ بعدازاں 100ٹرکوں کے قافلے کے ساتھ پاکستان کی جانب روانہ ہوئے۔ اس دوران ہندو بلوائیوں نے ہمارے قافلے پر حملہ کردیا اور اس حملے میں بے شمار مسلمان شہید کردیئے گئے جبکہ جو اس حملے کے دوران چھپتے چھپاتے بارڈر کراس کرکے لاہور کیمپ تک پہنچ پائے۔ محمد شریف نے انتہائی دکھ بھرے لہجے میں بتایا کہ اپنے گاؤں سے ہجرت کرتے ہوئے راستے میں جو انسانیت سوز مظالم اور انسانوں کی تذلیل دیکھی وہ آج بھی چشم تصور میں دیکھ کر روح تک کانپ جاتی ہے۔ ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ پاکستان کے عوام کو اس آزادی کی قدر کرنی چاہئے اور اپنے آزاد ملک سے پیار اور اس کے تحفظ و سالمیت کیلئے ہمہ وقت تیار رہنا چاہئے۔ یہ ملک ہمارے لاکھوں بھائیوں‘ بہنوں اور بیٹوں کی قربانی کا ثمر ہے۔

محمد شریف

مزید : ملتان صفحہ آخر