متاثرہ خاتون ہسپتال میں بے یارومددگار ، پولیس آپریشن، دوملزم گرفتار

متاثرہ خاتون ہسپتال میں بے یارومددگار ، پولیس آپریشن، دوملزم گرفتار

کوٹ ادو‘ مظفرگڑھ(تحصیل رپورٹر‘ نامہ نگار) بیوی واپس نہ کرنے پر ساس کا ناک اورکان کاٹنے والے داماد اور اس کے ساتھیوں کے خلاف اقدام قتل کا مقدمہ درج کرلیا گیا۔اعضا(بقیہ نمبر14صفحہ12پر )

کاٹنے کی دفعہ بھی لگائی گئی ہے۔خاتون کی حالت تشویشناک بتائی جارہی ہے جبکہ ہسپتال میں بیڈ نہ ہونے پر متاثرہ خاتون نے رات ہسپتال کے لان میں گزاری، پولیس نے مرکزی ملزم سمیت ایک ساتھی کو گرفتار کر لیا۔ تفصیل کے مطابق کوٹ ادو کے نواحی موضع ٹھٹھہ گورمانی کے رہائشی موہانہ برادری کے اللہ بخش موہانہ کے بیٹے ظفر اقبال موہانہ کی شادی شہناز مائی سے ہوئی تھی ‘گھریلو ناچاقی پر شہناز مائی اپنے والد کے گھر چلی گئی تھی اور خاوند کے خلاف عدالت میں رٹ دائر کردی جس کا ظفر اقبال کو رنج تھا،ظفر اقبال نے کئی بار اپنی ساس سکینہ مائی کو اپنی بیوی شہناز کی واپسی کیلئے کہامگرسکینہ مائی نے اپنی بیٹی نہ بھیجی۔8اگست کو ظفر اقبال نے اپنی ساس سکینہ مائی کو موبائل پر کال کرکے ادھار کی رقم واپس دینے کیلئے بلایا اور سنانواں میں اسے اڈہ پر نشہ آور بوتل پلائی جس سے وہ بے ہوش ہو گئی جسے رکشہ میں ڈال کر اپنے گھر ٹھٹھہ گورمانی لے گیا جہاں پر اپنی بھائی خالد موہانہ سمیت دیگر ساتھیوں اللہ ڈیوایا،اللہ دتہ،حسینہ مائی زوجہ خالد،خورشید مائی زوجہ ظفر ،سلیم اور رفیق کے ہمراہ اسے قابوکرلیااور ظفر اقبال نے چھری سے ساس سکینہ مائی کا ایک دائیاں کان اورناک کاٹ دیا،بعدازاں اس کے کانوں سے بالیاں 9ماشہ بھی اتار لیں اور فرار ہو گیا۔تشویشناک حالت کے باعث سکینہ مائی کو رورل ہیلتھ سنٹر گجرات بعد ازاں اسے ڈسٹرکٹ ہسپتال مظفرگڑھ منتقل کر دیا گیا ہے جہاں ہسپتال میں بیڈ نہ ہونے پر اسے طبی امداد کے بعد بے یارومددگار چھوڑ دیا جس پر متاثرہ خاتون نے رات ہسپتال کے لان میں گزاری،دوسری طرف وقوعہ کی اطلاع پر پولیس محمود کوٹ نے سکینہ مائی کی مدعیت میں داماد ظفر اقبال سمیت اس کے ساتھیوں کے خلاف اقدام قتل کا مقدمہ نمبر288/18زیر دفعہ 149-148-324درج کرلیا تھا بعدازاں مقدمہ میں اعضاء کاٹنے کا دفعہ334کا اضافہ بھی کردیا،جبکہ پولیس نے مرکزی ملزم ظفر اقبال سمیت اس کے ایک ساتھی محمد سلیم کو بھی گرفتار کر لیا ہے۔

مقدمہ درج

مزید : ملتان صفحہ آخر