392کلو میٹر روٹ کے تمام نقائص دور کر نیکی ہدایت

392کلو میٹر روٹ کے تمام نقائص دور کر نیکی ہدایت

ملتان(سٹاف رپورٹر) ملتان سکھر موٹروے 392کلومیٹرموٹروے منصوبے کا جائزہ لیتے ہوئے جنرل مینجرملتان ارباب علی اکبرنے تینوں پراجیکٹ ڈائریکٹرزاورریذیڈنٹ انجینئرزکومنصوبہ کی تکمیل سے قبل تمام سیکشنوں پرسامنے آنے والے نقائص کوفوری دورکرنے اور ایکبارپھر(بقیہ نمبر36صفحہ12پر )

باریک بینی سے منصوبہ کے معائنہ کے لئے ہدایات جاری کی ہیں تاکہ منصوبہ میں کسی قسم کی کمی نہ رہ سکے اورموٹروے پرسفرکرنے والے شہری منصوبہ آپریشنل ہونے پرمحفوظ سفرکرسکیں۔ گزشتہ روز پراجیکٹ ڈائریکٹرز،ریذیڈنٹ انجینئرزاورکنسلٹنٹس کے اجلاس کی صدارت کے دوران انہوں نے سیکشن تھری کے پراجیکٹ ڈائریکٹرمحمدشریف کوہدایت کی کہ وہ سب سیکشن تھری پرسامنے آنے والے نقائص کے سدباب کے لئے ہنگامی بنیادوں پراقدامات اٹھائیں مذکورہ سیکشن کودیگرسیکشنوں کی طرح بہترین ہوناچاہیے۔بتایاجاتاہے کہ تمام زیذیڈنٹ انجینئرز نے اپنے اپنے سیکشنوں میں ایکبارپھرمعائنہ شروع کردیاہے تاکہ کسی بھی قسم کے نقص کے سامنے آنے کی صورت میں اس کی اصلاح کی جاسکے۔واضح رہے کہ سیکشن تھری کے سب سیکشن تھری پرتعمیرہونے والے انڈرپاسز،سب ویمیں کریکس ،چند مقامات پربیرئیرکے ساتھ اسفالٹ بیس کی 8،8سینٹی میٹرکی بچھائی جانے والی تہیوں میں بجری کی زائد مقدارکے استعمال کئے جانے کی بھی شکایات سامنے آئی تھیں جس سے فائنل اسفالٹ کے معیارمیں فرق پیداہونے کاامکان تھا۔اسی طرح منصوبہ میں آنے والے 100سے زائد پانی کے کھالوں کے لئے بنائے گئے پائپ کل وٹ بھی مٹی میں ڈب جانے کی شکایات تھیں جس سے مستقبل میں ونگ وال کونقصان پہنچنے کااحتمال ہے۔جنرل مینجرنے اس نوعیت کی تمام شکایات کے خاتمہ کے لئے بھی ہدایات جاری کیں۔

392کلومیٹر

مزید : ملتان صفحہ آخر