’تمہیں معافی نہیں مانگنی چاہیے کیونکہ یہ لطیفہ۔۔۔‘ برطانیہ کے سابق وزیر خارجہ کی جانب سے برقعہ کو لیٹربکس کہنے پر مسٹر بین میدان میں آگئے، ایسی بات کہہ دی کہ مسلمانوں کو شدید غصہ آگیا

’تمہیں معافی نہیں مانگنی چاہیے کیونکہ یہ لطیفہ۔۔۔‘ برطانیہ کے سابق وزیر ...
’تمہیں معافی نہیں مانگنی چاہیے کیونکہ یہ لطیفہ۔۔۔‘ برطانیہ کے سابق وزیر خارجہ کی جانب سے برقعہ کو لیٹربکس کہنے پر مسٹر بین میدان میں آگئے، ایسی بات کہہ دی کہ مسلمانوں کو شدید غصہ آگیا

  

لندن(نیوز ڈیسک)سابق برطانوی وزیر خارجہ بورس جانسن کی جانب سے برقعہ پوش خواتین کو لیٹر بکس قرار دئیے جانے پر دنیا بھر میں انہیں تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے اور یقینا انہیں خود بھی شرمندگی محسو س ہوئی ہوگی مگر یہ جان کر آپ کو یقیناً بہت افسوس ہو گا کہ مشہور کامیڈین روون ایٹکنسن المعروف ”مسٹر بین“ ان کی حمایت میں نکل آئے ہیں۔ ایٹکنسن کا کہنا ہے کہ آدمی کو برا لطیفہ سنانے پر معافی مانگنی چاہیے اور بورس جانسن نے برقعہ پوش خواتین کے متعلق جو کہا وہ کوئی برا لطیفہ نہیں، بلکہ بہت ہی اچھا لطیفہ ہے۔

میل آن لائن کے مطابق بورس جانسن کے غیر ذمہ دارانہ بیان پر ان کی اپنی جماعت کنزرویٹو پارٹی نے بھی تحقیقات کا حکم جاری کررکھا ہے۔ ایسے میں یہ بات حیرانی کا باعث ہے کہ ایٹکنسن جیسے معروف کامیڈین نے ان کے غیر اخلاقی بیان کو ایک اچھا لطیفہ قرار دے ڈالا ہے۔ بورس جانسن کیلئے اپنی مکمل حمایت کا اعلان کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ”مذہب کے خلاف لطائف بنانے کی آزادی سے میں خود ہمیشہ مستفید ہوتا رہا ہوں۔ میں تو یہ کہوں گا کہ بورس جانسن کا یہ کہنا کہ برقعہ پہننے والی خواتین لیٹر بکس جیسی نظر آتی ہیں ایک اچھا لطیفہ ہے۔“

جریدے ٹائمز کو لکھے گئے خط میں ان کا مزید کہنا تھا کہ ”مذہب کے متعلق بنائے گئے تمام لطاف کسی نا کسی کی دل آزاری کا سبب بنتے ہیں لہٰذا ان پر معافی مانگنا بے معنی بات ہے۔ آپ کو صرف ایک برے لطیفے کے لئے معافی مانگنا چاہیے۔ اس بنیاد پر دیکھا جائے تو بورس جانسن کی معافی نہیں بنتی۔“

مزید : برطانیہ