حکومت سیاسی مخالفین کو دبانے کے بجائے فوری ریلیف دے، پی پی رہنما

حکومت سیاسی مخالفین کو دبانے کے بجائے فوری ریلیف دے، پی پی رہنما

  

 ملتان(نمائندہ خصوصی)پاکستان پیپلزپارٹی ملتان سٹی کے صدر ملک نسیم لابر، جنرل سیکرٹری اے ڈی بلوچ، سینئر نائب صدور میاں منظور قادری و ساجد بلوچ، ڈپٹی سیکرٹری انفارمیشن و انچارج میڈیا سیل خواجہ عمران، نائب صدور نعیم شہزاد بھٹی، نواز سوترک، حاجی امین ساجد، زاہد محمود صدیقی، ملک ندیم اختر، راحیل انجم، ملک افتخار، شمشاد سیال، رمضان کمبوہ، طارق شاد، ملک فیاض و دیگر نے پیپلز سٹی سیکرٹریٹ میں مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم عمران(بقیہ نمبر25صفحہ6پر)

 خان نے حالیہ اقتدار کے دو سال میں شروع دن سے ا?ج تک عوام کو مہنگائی و بے روزگاری کے سوا کچھ نہیں دیا اپنی نااہلیوں و نالائقیوں پرعوامی ا?واز کو دبانے کیلئے وزیراعظم عمران خان اپنے سیاسی مخالفین کو نیب جیسے ادارہ کے زریعے انتقامی سیاست کا نشانہ بنا رہے ہیں لیکن تبدیلی سرکار نے جس نیب کو سیاسی انتقام لینے کی غرض سے استعمال کیا اس کا کردار پاکستانی عوام سمیت پوری دنیا میں بے نقاب ہو چکا ہے حال ہی میں خواجہ برادران کے کیس میں سپریم کورٹ ا?ف پاکستان بھی واضح کر چکا ہے نیب میں قائم کئے گئے مقدمات بنیادی حقوق کو پامال کر رہے ہیں نیب جیسا ادارہ قانون، مساوات و انصاف کو مکمل طور پر نظر انداز کر رہا ہے نیب سیاسی انتقامی کاروائیاں کر رہا ہے ہیومن رائٹس واچ بین القوامی ادارہ ہے اس ادارہ نے بھی اپنی رپورٹ میں واضح کر دیا ہے کہ نیب کو سیاسی انتقام کے طور پر استعمال کیا جا رہا ہے اور رپورٹ میں واضح کیا گیا ہے کہ پاکستانی سپریم کورٹ کا فیصلہ نیب کے غیر قانونی سلوک کا تازہ فرد جرم ہے کیونکہ موجودہ حکمران ٹولہ مخالفین کو ڈرانے اور ہراساں کرنے کیلئے نیب کو بطور ا?لہ استعمال کر رہا ہے واضح رہے کہ ہیومن رائٹس واچ وہ عالمی ادارہ ہے جسکی رپورٹس کو ہمیشہ کشمیر میں ہونے والے بھارتی ظلم و ستم پر حوالے کے طور پر پیش کیا جاتا رہا ہے ہیومن رائٹس واچ کے ایشیا کے ڈرائیکٹر بریڈ ایڈم کی رپورٹ واضح کرتی ہے کہ موجودہ حکومت نیب کو سیاسی جماعتوں میں موجود سیاسی مخالفین اور صحافی برادری کے خلاف انتقامی کاروائی کے طور پر استعمال کر رہی ہے اس معتبر عالمی ادارہ ہیومن رائٹس واچ کی رپورٹ نے یہ بھی واضح کر دیا کہ ڈکٹیٹر جنرل مشرف کے دور میں بنائے گئے کالے قانون کے تحت جنم لینے والے ادارے نیب کو عوامی ایشوز پر ا?واز بلند کرنے والے سیاسی مخالفین کے خلاف انتقام لینے کے طور پر استعمال کیا جا رہا ہے اس رپورٹ میں اس بات کا بھی خاص طور پر ذکر کیا گیا ہے کہ سپریم کورٹ ا?ف پاکستان کے فیصلے کا وکلا کی اعلی منتخب تنظیموں سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن اور پاکستان بار کونسل نے بھی خیر مقدم کیا فروری میں چیئرمین پاکستان پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری کو نیب کی جانب سے جو سمن جاری کئے گئے اس اس سمن کو بھی ان دو منتخب اداروں سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن اور پاکستان بار کونسل نے سیاسی انتقام کی کاروائی قرار دیتے ہوئے شدید مذمت کی تھی مارچ میں اسلام ا?باد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس کا فیصلہ بھی سب کو معلوم ہے جس میں کہا گیا کہ نیب گرفتاری کے اختیارات کو من مانی کے طور پر استعمال کر رہا ہے رپورٹ میں خاص طور پر ذکر کیا گیا ہے کہ نیب کے سیاسی انتقام کی بدترین مثال یہ ہے کہ سابق صدر پاکستان ا?صف علی زرداری شدید بیمار ہیں میڈیکل سرٹیفیکٹ بھی پیش کر رہے ہیں لیکن اس کے باوجود بھی انسانی بنیادی حقوق کی دھجیاں بکھیرتے ہوئے ا?صف علی زرداری کو زاتی طور پر پیش ہونے کا کہا جا رہا ہے ہیومن رائٹس واچ کی اس رپورٹ کے بعد وزیراعظم عمران خان کی ا?مرانہ وجابرانہ سوچ عیاں ہو گئی کہ وزیراعظم عمران خان عوامی ا?واز کو دبانے کیلئے نیب کو سیاسی مخالفین کے خلاف اور صحافیوں کے خلاف بطور  ہتھیار استعمال کر رہے ہیں پیپلزپارٹی ا?ج مطالبہ کرتی ہے کہ نیب جیسے ادارے کو فوری طور پر ختم کیا جائے بلاول بھٹو زرداری، ا?صف علی زرداری، فریال تالپور، سید یوسف رضا گیلانی سمیت تمام سیاسی و صحافتی  رہنماوں کے خلاف مقدمات ختم کئے جائیں سینئر پارلیمنٹرین سید خورشید شاہ،  سمیت تمام سیاسی اسیران کو حکومت فوری رہا کرے اور سیاسی مخالفین کو دبانے کے بجائے عوام کو فوری طور پر ریلیف دے  ورنہ دما دم مست قلندر ہو گا کیونکہ عوام مہنگائی و بے روزگاری سے تنگ آئی ہوئی ہے۔

نسیم لابر

مزید :

ملتان صفحہ آخر -