انسانی حقوق کمیٹی کے چیئر مین بلاول بھٹو نے ام رباب کا معاملہ اجلاس کے ایجنڈے سے نکال دیا

انسانی حقوق کمیٹی کے چیئر مین بلاول بھٹو نے ام رباب کا معاملہ اجلاس کے ایجنڈے ...
انسانی حقوق کمیٹی کے چیئر مین بلاول بھٹو نے ام رباب کا معاملہ اجلاس کے ایجنڈے سے نکال دیا

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن )قومی اسمبلی کی کمیٹی برائے انسانی حقوق کے چیئر مین بلاول بھٹو نے ام رباب سے متعلق معاملہ اجلاس کے ایجنڈے سے نکال دیا ۔

تفصیل کے مطابق حکمران جماعت پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) سے تعلق رکھنے والی قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے انسانی حقوق کے اراکین نے کمیٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کو اجلاس بلانے میں تاخیر اور یکطرفہ طور پر ایجنڈا تبدیل کرنے پر تنقید کی ۔ پی ٹی آئی کے ایم این اے لعل چند نے 16 جولائی کو اجلاس بلانے کے لیے ریکوزیشن نوٹس جمع کرایا تھا۔انہوں نے بتایا کہ قواعد کے تحت چیئرمین 14 دن کے اندر یعنی 30 جولائی تک کمیٹی کا اجلاس بلانے کے پابند تھے لیکن افسوس ہے کہ اجلاس 12 اگست کو طلب کیا گیا۔ پی ٹی آئی کے قانون ساز نے کہا کہ ریکوزیشن نوٹس کے ذریعے ’انہوں نے دو امور پر بات چیت کے لیے اجلاس طلب کرنے کا مطالبہ کیا تھا جس میں ام رباب کو انصاف فراہم کرنے میں ’متعلقہ محکموں اور اداروں‘ کی مبینہ ناکامی سے متعلق ایک اہم ایشو زیر بحث لانا تھا۔انہوں نے بتایا کہ 3 سال پہلے چند ’جاگیرداروں‘ نے ام رباب کے خاندان کے 3 افراد کو بے دردی سے قتل کردیا تھا لیکن کمیٹی کے چیئرمین نے اسے اجلاس کے ایجنڈے کا حصہ نہیں بنایا۔لعل چاند نے اعلان کیا کہ وہ ام رباب کو کمیٹی کے اجلاس میں لائیں گے جبکہ چیئرمین کی جانب سے مسئلے کو ایجنڈے میں شامل نہیں کیا گیا۔

گزشتہ برس چیف جسٹس آف پاکستان گلزار احمد نے ام رباب کو انصاف کی یقین دہانی کرائی تھی جب انہوں نے حیدرآباد میں قتل کیس کی فائل ان کے حوالے کی جہاں وہ ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن کے سالانہ عشائیے میں شرکت کے لیے آئے تھے۔ابتدا میں ام رباب کو پولیس نے چیف جسٹس کے پاس آنے سے روکا دیا تھا لیکن بالآخر انہیں ان سے ملنے کی اجازت دی گئی۔ان کے والد مختیار چانڈیو، دادا کرم اللہ چانڈیو اور کابل چانڈیو کو 17 جنوری 2018 کو ضلع دادو میں فائرنگ کر کے قتل کر دیا تھا، اس مقدمے میں سندھ اسمبلی کے پی پی پی کے دو ارکان کو بھی نامزد کیا گیا تھا۔

مزید :

علاقائی -سندھ -کراچی -