حکومت کا تحریک انصاف سےغیر مشروط مذاکرات کا اعلان ، کمیٹی قائم ، مذاکرات آئینی حدود میں چاہتے ہیں: اسحق ڈار

حکومت کا تحریک انصاف سےغیر مشروط مذاکرات کا اعلان ، کمیٹی قائم ، مذاکرات ...
حکومت کا تحریک انصاف سےغیر مشروط مذاکرات کا اعلان ، کمیٹی قائم ، مذاکرات آئینی حدود میں چاہتے ہیں: اسحق ڈار

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) وفاقی وزیر خزانہ اسحق ڈار نے کہا ہے کہ وزیر اعظم نواز شریف نے تحریک انصاف سے مذاکرات شروع کرنے کی ہدایت کر دی ہے ، اس ہدایت کی روشنی میں وقت کا ضیاع نہیں بلکہ بامقصد مذاکرات چاہتے ہیں اور کوشش ہو گی کہ کل مذاکرات کا پہلا دن ہو۔ انہوں نے مزید کہا کہ زیر اعظم نے احسن اقبال اور مجھ پر مشتمل کمیٹی قائم کر دی ہے اوردوبارہ مذاکرات کا آغاز وہیں سے کیا جائے گا جہاں پہلے سلسلہ ٹوٹا تھا۔ پریس کانفرنس سے خطاب میں انہوں نے کہا کہ مذاکرات آئین اور قانون کی حدود میں ہوں گے، نہ ہم کوئی غیر قانونی رکاوٹ ڈالیں گے اور نہ تحریک انصاف کوئی غیر قانونی مطالبہ پیش کرے۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ حکومت کی طرف سے اعلان کے بعد اب تحریک انصاف کو چاہئے کہ اپنے احتجاج کوغیر معینہ مدت تک کیلئے ملتوی کرے، میز پر آئے اور ملک کو اس بحران سے نجات دلوائے، تاہم یہ ہمارے طرف سے مذاکرات کیلئے شرط نہیں ہے۔

 انہوں نے واضح کیا کہ جس طرح تحریک انصاف کی جانب سے وزیر اعظم نواز شریف کے استعفے سے متعلق غیر آئینی مطالبہ واپس لے لیا گیا، اس پر ان کے شکر گزار ہیں اور سمجھتے ہیں کہ اب تمام معاملات آئین کی حدود میں ہی چلیں گے، اگر تحقیقات میں دھاندلی ثابت نہیں ہوتی تو تحریک انصاف واپس اسمبلی میں آ ئے گی اور اگر الزامات ثابت ہوئے تو پوری اسمبلی گھر جائے گی۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ ملکی معیشت کو کافی نقصان ہو چکا ہے اور چاہتے ہیں کہ اب یہ معاملہ جلد سے جلد حل ہو جائے تاکہ عالمی معاشی اداروں کا پاکستان پر قائم اعتماد قائم رہے۔

انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف کو دعوت دیتے ہیں کہ انتخابی اصلاحاتی کمیٹی کی میٹنگز میں شریک ہوں اور آئینی تندیلیوں کا حصہ بنیں، کمیٹی کی 16 سے زائد میٹنگز میں متعدد قوانین اور ترامیم کی منظوری دی گئی ہے اور مزید تجاویز پر بھی غور کیا جا رہا ہے، ہم چاہتے ہیں تحریک انصاف بھی اسمبلی میں واپس آ کر اس کا حصہ بنے۔ انہوں نے بتایا کہ فیصلے کے بعد تحریک انصاف کی قیادت سے رابطے کی کوشش کی تاہم ان سے رابطہ نہیں ہو سکا تاہم اب میڈیا سے بات چیت کے بعد شاہ محمود قریشی کو فون کر کے باقاعدہ مذاکرات کی دعوت دیں گے اور طے کریں گے آگے معاملات کس طرح چلانے ہیں۔

اسحق ڈار نے کہا کہ عمران خان کی جانب سے دو روز پہلے آ نے والے بیان پر تشویش تھی کہ عمران خان کہیں اپنی مرضی کا نتیجہ نہ نکلنے پر کمیشن کو مسترد ہی نہ کر دیں تو اس پر شاہ محمود قریشی نے وضاحت کر دی کہ جو بھی نتیجہ نکلے گا تحریک انصاف اسے تسلیم کرے گی۔ وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ مذاکرات کی معطلی کے دوران بھی تحریک انصاف سے مسلسل رابطے میں تھے اور معاملات کے حل کیلئے غوروفکر کر رہے تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ فیصل آباد میں تصادم کے دوران ہونے واکی ہلاکت پر تحقیقات جاری ہیں اور جلد ذمہ داروں کا تعین ہو جائے گا۔

مزید : قومی /Headlines