کمپیوٹر نیٹ ورکنگ کی خرابی دور نہ ہونے پر جسٹس سید منصور علی شاہ کی متعلقہ حکام کی سر زنش

کمپیوٹر نیٹ ورکنگ کی خرابی دور نہ ہونے پر جسٹس سید منصور علی شاہ کی متعلقہ ...

لاہور (نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائیکورٹ میں 3روز گزرنے کے باوجود کمپیوٹر نیٹ ورکنگ کی خرابی دور نہ کرپانے پر مسٹرجسٹس سید منصور علی شاہ نے متعلقہ برانچوں کے دورہ کے موقع پر ایڈیشنل رجسٹرار آئی ٹی برانچ صائمہ مشتاق اور ڈپٹی رجسٹرار ارجنٹ برانچ مسعود احمد کی سرزنش کردی ۔لاہور ہائیکورٹ میں نیٹ ورکنگ میں خرابی تین دن گزرنے کے بعد بھی ٹھیک نہیں ہو سکی جس کی وجہ سے سینکڑوں سائلین اور وکلاء کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے، نقل برانچ میں مقدمات کی مصدقہ نقول کیلئے سوفٹ ویئر کی بجائے کمپیوٹر پر عام طریقے سے کام شروع کر دیا گیا ہے جبکہ ارجنٹ برانچ میں بھی مینیؤل طریقے سے مقدمات کی مارکنگ کی جا رہی ہے، عدالت عالیہ کے آئی ٹی معاملات کے سربراہ ہونے کے پیش نظر جسٹس سید منصور علی شاہ نے نیٹ ورکنگ کی خرابی کے باعث پیدا ہونیوالی صورتحال کا جائزہ لینے کیلئے ارجنٹ برانچ اور نقل برانچ کا ہنگامی دورہ کیا، فاضل جج نے ارجنٹ برانچ کے کمپیوٹرزکا خود معائنہ کیا اور مقدمات کی مارکنگ کے طریقہ کار پر بھی بریفنگ لی، فاضل جج نے ڈیٹا اینٹری آپریٹرز کومقدمات کے کمپیوٹرز میں اندراج کیلئے مکمل تربیت نہ دینے پر ایڈیشنل رجسٹرار آئی ٹی برانچ صائمہ مشتاق کی سخت سرزنش کر ڈالی، فاضل جج نے ارجنٹ برانچ میں کمپوٹرز کی خرابی اور یو پی ایس نہ ہونے پر بھی ڈپٹی رجسٹرار ارجنٹ برانچ مسعود احمد پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ادارہ بحران سے گزر رہا ہے اور متعلقہ افسر ہاتھ پر ہاتھ دھرے بیٹھے ہیں، فاضل جج کو بتایا گیا کہ ایک ڈیٹا انٹری آپریٹرعمران نے اپنے طور پر ہی سینکڑوں مقدمات کا اندرا ج کر ڈالا ہے جس پر فاضل جج نے اعلان کیا کہ نیٹ ورکنگ کی خرابی کے دوران اچھی کارکردگی کا مظاہر کرنے والے ڈیٹا انٹری آپریٹرز کو ایوارڈز سے نوازا جائے گا۔ فاضل جج نے لاپتہ مقدمات کے دوبارہ اندراج کیلئے فوجداری اور دیوانی سیکشنز میں اضافی ڈیٹا انٹری آپریٹرز فوری تعینات کرنے کا حکم دے دیا۔

مزید : صفحہ آخر