پی یو جے کے زیراہتمام ”محمد الرسول اللہ“ کانفرنس،ممتازعلماء کی شرکت

پی یو جے کے زیراہتمام ”محمد الرسول اللہ“ کانفرنس،ممتازعلماء کی شرکت

  



لاہور(سٹی رپورٹر)پی یو جے کے زیر اہتمام ”محمد الرسول اللہ“ کانفرنس کا انعقادپنجاب یونین آف جرنلسٹس کے دفتر کے باہر کیا گیا۔کانفرنس سے منہاج القرآن،جامع المنتظر،جماعت اسلامی کے سکالرز سمیت ممتاز علمائے کرام اور صحافتی تنظیموں کے رہنماؤں نے خطاب کیا۔کانفرنس میں مسلم سکالرز کے علاوہ مسیحی و سکھ رہنماؤں نے بھی شرکت کی۔کانفرنس کا انعقاد تحریک منہاج القرآن اور پنجاب یونین آف جرنلسٹس کے مشترکہ تعاون سے ہوا۔ کانفرنس سے منہاج القرآن کے پروفیسر عین الحق بغدادی، جامعتہ المنتظر کے سینئر عہدیدار علامہ سبطین اور جماعت اسلامی کے رہنما فرید پراچہ نے خطاب کیا۔ پروفیسر عین الحق بغدادی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ برائی سے بچنا اور برائی سے روکنا یہ ہر کلمہ گو مسلمان پر فرض ہے، اسلام نے امر بالمعروف و نہی المنکر کا ایک جامع تصور دیا۔ انہوں نے کہا کہ بری خبر پھیلانا بھی ایک برائی ہے،قرآن مجید کا حکم ہے کہ آنکھیں بند کر کے غیر مصدقہ خبریں دوسروں تک مت پہنچائیں،علامہ سبطین نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ قرآن کی تعلیمات آسان اور قابل فہم ہیں، جو بھی اس پر تدبر کرے گا مطالب و مفاہیم اس پر منکشف ہوتے چلے جائیں گے۔ بطور مسلمان ہمیں قرآن مجید کا مطالعہ اپنے معمولات زندگی میں شامل کرنا چاہیے۔ جماعت اسلامی کے سینئر رہنما ڈاکٹر فرید احمد پراچہ نے کہا کہ محمدالرسول اللہ ؐکانفرنس ایک شاندار کاوش ہے، اسلام اور قرآن مجید کے حوالے سے پائی جانے والی غلط فہمیوں کے ازالے کے لیے اس طرح کی کانفرنسز منعقد ہوتی رہنی چاہئیں۔ کانفرنس کے کنوینیئر ندیم حیدرنے کانفرنس میں شرکت کرنے پر تمام جماعتوں اورسماجی،صحافتی تنظیموں کے رہنماؤں اور سینئرصحافیوں کا شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے کانفرنس کے انعقاد کے حوالے سے تحریک منہاج القرآن کے خصوصی تعاون پر بھی شکریہ ادا کیا۔ کانفرنس میں، پی یو جے کے صدر شہزاد حسین بٹ، پی ایف یو جے کے مرکزی سیکرٹری جنرل، رانا عظیم نائب صدر عامر سہیل،سینئر صحافیوں ایثاررانا، نورحسن رانا، نعیم مصطفی، بابر ڈوگر، قاضی طارق، امجد اقبال، میاں شاہد، عبدالحفیظ چودھری،ندیم رضا، عمران جلیل و دیگرنے شرکت کی۔ کانفرنس میں سکھ برادری کے رہنما سردار سکندر سنگھ اور مسیح برادری سے جیکولین ٹریسر نے شرکت کی اور کانفرنس کو بین المذاہب ہم آہنگی اور احترام کے ضمن میں سنگ میل قرار دیا، اقلیتی رہنماؤں نے کہا کہ دنیا کا کوئی مذہب کسی دوسرے کی مذہبی کتابوں کی توہین کی اجازت نہیں دیتا۔

مزید : میٹروپولیٹن 1


loading...