کراچی: نئی نویلی دلہن کا سسرالیوں کے ہاتھوں مبینہ قتل

کراچی: نئی نویلی دلہن کا سسرالیوں کے ہاتھوں مبینہ قتل
کراچی: نئی نویلی دلہن کا سسرالیوں کے ہاتھوں مبینہ قتل

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

  کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن)کورنگی مہران ٹاؤن کے مکان سے ایک خاتون کی لاش ملی ہے جسے مبینہ طور پر تشدد کرکے قتل کیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق کورنگی صنعتی ایریا تھانے کے علاقے کورنگی مہران ٹاؤن سیکٹر6 عمر بن خطاب مسجد کے قریب ڈی مکان نمبر ایم بی 53 سے خاتون کی لاش ملی ہے جسے مبینہ طور پر تشدد کرکے قتل کیا گیا۔خاتون کی لاش قانونی کارروائی کے لیے جناح ہسپتال منتقل کی گئی، خاتون کی شناخت 18 سالہ روما زوجہ سلیم کے نام سے ہوئی ہے۔

ایس ایچ او کورنگی عبید اللہ کا کہنا ہے کہ پولیس کی خاتون کے ماموں سے موبائل فون پر بات ہوئی ہے اور ماموں نے پولیس کو بتایا کہ رات میں روما سے ان کی بات ہوئی تھی اور وہ بلکل ٹھیک تھی لیکن اتوار کو دوپہر میں معلوم ہوا کہ اس کی طبیعت خراب ہوئی ہے جسے قریبی ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں وہ دم توڑ گئی۔

ایس ایچ او نے بتایا کہ ہسپتال سے اطلاع موصول ہونے پر ڈیوٹی افسر کو اسپتال روانہ کر دیا گیا ہے، ڈیوٹی افسر ہسپتال پہنچ کر تمام تر تفصیلات اکٹھا کرے گا جس کے بعد ہی حقائق سامنے آئیں گے۔ انہوں نے بتایا کہ فوری طور پر وجہ موت کا تعین نہیں ہوسکا، پولیس اس حوالے سے مزید تفتیش کر رہی ہے۔

خاتون کے والد نے جناح اسپتال میں میڈیا سے گفتگو میں بتایا کہ میں اپنی بیٹی سے بہت پیار کرتا تھا، بیٹی کے لیے نئے کپڑے اور پھل بھی خریدے تھے۔ بیٹی کی طرف جانے کے لیے گھر سے نکلا تھا کہ راستے میں اطلاع ملی کہ بیٹی جناح ہسپتال میں ہے، جناح پہنچ کر دیکھا تو بیٹی کی لاش پڑی تھی۔ میری بیٹی کی عمر19 سے 20سال تھی۔

انہوں نے بتایا کہ بیٹی کی دور کے رشتہ داروں میں شادی کی تھی جبکہ سات ماہ قبل شادی ہوئی تھی۔ ابتدائی دنوں سے ہی اولاد کے لیے میری بیٹی کو اسکی ساس تعویزات پلایا کرتی تھی جس وجہ سے ذہنی دباؤ کا شکار بھی تھی۔ ہفتے کی شب بیٹی سے بات ہوئی، وہ بلکل ٹھیک تھی لیکن صبح کال کی تو نمبر بند تھا، سسرالیوں کی طرف سے کوئی جواب نہیں آرہا تھا۔ بیٹی اکثر اپنی ماں سے ساس اور شوہر کے تشدد کی شکایات کرتی تھی۔ شبہ ہے کہ ساس اور شوہر کی جانب سے شدید ذہنی دباؤ اور تشدد سے میری بیٹی کی موت ہوئی ہے۔

جاں بحق ہونے والی خاتون کے شوہر سلیم نے بتایا کہ ہفتے کی شب 12 بجے کام سے واپس گھر پہنچا تو بیوی کے ساتھ کھانا کھایا اور اس کے بعد رات ڈھائی بجے تک ہم ٹی وی دیکھتے رہے، ڈھائی بجے کے بعد بیوی ٹی وی بند کرکے سوگئی، صبح ساڑھے پانچ بجے اہلیہ نے اسے اٹھا کر پانی مانگا لیکن بیوی نے پانی پیا نہیں اور اس کے بعد بیوی میرا ہاتھ زور سے پکڑ کر دوبارہ لیٹ کر سوگئی۔

شوہر نے بتایا کہ صبح ساڑھے 10 بجے میں سو کر اٹھا اور اس کے بعد بیوی کو اٹھانے کی کوشش کی لیکن بیوی نہیں اٹھی، شادی کو چھ ماہ ہوئے ہیں اور بیوی کو کوئی بیماری نہیں تھی، میں اپنی بیوی پر تشدد نہیں کرتا تھا۔